بھارتی سپریم کورٹ نے کسانوں کا احتجاج رکوانے کی حکومتی درخواست مسترد کردی

بھارتی سپریم کورٹ نے متنازع زرعی قوانین کے خلاف جاری کسانوں کا احتجاج رکوانے کی مودی سرکار کی درخواست مسترد کردی ہے۔

مہر خبررساں ایجنسی نے بھارتی ذرائع کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ بھارتی سپریم کورٹ نے متنازع زرعی قوانین کے خلاف جاری کسانوں کا احتجاج رکوانے کی مودی سرکار کی درخواست مسترد کردی ہے۔ بھارت میں متنازع زرعی قوانین کے خلاف کسانوں کا احتجاج تئیسویں  روز بھی جاری ہے۔ کسان تحریک سے متعلق سپریم کورٹ میں سماعت کے دوران بھارتی چیف جسٹس نے کہا ہے کہ کسانوں کو احتجاج کرنے کا حق حاصل ہے اور عدالت کے مطابق احتجاج قومی مسئلہ بن سکتا ہے۔

ادھر بھارت میں  جاری  کسانوں کی احتجاجی تحریک  مودی سرکار کیلئے درد سر  بن  گئی۔بھارتی   کسانوں کا ملک گیر  احتجاج تین ہفتوں سے جاری ہے۔ دارالحکومت نئی دہلی کے اطراف میں ہزاروں کسان دھرنا دیے بیٹھے ہیں۔  نئی دہلی کو دوسری ریاستوں سے ملانے والی قومی شاہراہ بند ہونے سے ٹریفک کے نظام اورمعاشی سرگرمیوں کو شدید  دھچکا  لگا ہے۔

بھارتی حکومت مظاہرین کے مطالبات پر سنجیدگی سے مذاکرات کرنے کے بجائے احتجاج کو منتشر کرنے کی کوششوں میں مصروف ہے۔ اسی سلسلے میں مودی سرکار نے بھارتی سپریم کورٹ سے رجوح کیا۔  متنازع زرعی قوانین  کے  خلاف کیس  کی سماعت دوران چیف جسٹس نے واضح کیا کہ کسانوں کو احتجاج کرنے کا حق حاصل ہے  اوربھارت میں جاری  یہ تحریک قومی مسئلہ بن سکتی ہے۔

دوسری جانب  دہلی اسمبلی میں کسانوں کی تحریک پربلائے گئے  اجلاس کے دوران وزیراعلیٰ   اروند کیجریوال نے متنازع   زرعی  قوانین کی کاپیاں پھاڑدیں ۔ حکومت  اور احتجاجی کسانوں کے درمیان بات چیت کے چھ دور ناکام ہوچکے ہیں  ۔

News Code 1904426

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 1 + 2 =