نیب نے پاکستان کی احتساب عدالت میں مفرور ملزم نواز شریف کے اثاثوں کی تفصیلات جمع کرادیں

پاکستان کے قومی احتساب بیورو " نیب" نے غیرقانونی اراضی الاٹمنٹ کے حوالے سے احتساب عدالت میں مفرور ملزم سابق وزیر اعظم نواز شریف کی زیر ملکیت منقولہ اور غیر منقولہ اثاثوں کی تفصیلات جمع کرا دی ہیں ۔

مہر خبررساں ایجنسی نے ڈان کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ پاکستان کے قومی احتساب بیورو " نیب"  نے غیرقانونی اراضی الاٹمنٹ کے حوالے سے احتساب عدالت میں مفرورملزم سابق وزیر اعظم نواز شریف کی زیر ملکیت منقولہ اور غیر منقولہ اثاثوں کی تفصیلات جمع کرا دی ہیں ۔ اطلاعات  کے مطابق نیب نے اپنی رپورٹ میں کہا ہے کہ نواز شریف زرعی اراضی کے متعدد ٹکڑوں کے مالک ہیں جن میں 936 کنال 10 مرلہ، 299 کنال 12 مرلہ اور 312 کنال اور 14 مرلہ لاہور میں، شیخوپورہ میں 88 کنال 50 مرلہ اور 14 کنال اور پانچ مرلہ شامل ہیں، سابق وزیر اعظم اپر مال میں شہری جائیداد کے مالک بھی ہیں۔ سیکیورٹیز اینڈ ایکسچینج کمیشن آف پاکستان کے ریکارڈ کے مطابق نواز شریف کے پاس محمد بخش ٹیکسٹائل ملز میں (5.82 فیصد)، حدیبیہ پیپرز ملز میں  ( 3.59فیصد)، حدیبیہ انجینئرنگ کمپنی (10.86فیصد) اور اتحاد ٹیکسٹائل ملز ( 0.96فیصد) کے شیئر ہولڈر ہیں۔

رپورٹ میں انکشاف کیا گیا ہے کہ مفرور سابق وزیر اعظم کے نام پر چار گاڑیاں ہیں جن میں ایک ٹویوٹا لینڈ کروزر، ایک مرسڈیز اور دو ٹریکٹر ہیں۔

عدالت نے 10 نومبر کو نواز شریف کو ریفرنس میں مفرور قرار دینے کا عمل مکمل کرنے کے بعد ناقابل ضمانت وارنٹ گرفتاری جاری کیے تھے جس میں جنگ گروپ کے ایڈیٹر انچیف میر شکیل الرحمٰن بھی شامل ہیں۔

نیب نے اپنے ریفرنس میں الزام لگایا ہے کہ شکیل الرحمٰن نے بلاک ایچ، جوہر ٹاؤن میں واقع ایک کنال پیمائش کے حامل 54 پلاٹوں کا استثنیٰ حاصل کیا تھا۔

نیب نے الزام لگایا کہ اس زمین کی الاٹمنٹ اس وقت کے وزیر اعلیٰ نواز شریف کے ساتھ استثنیٰ پالیسی اور قوانین کے برخلاف مالی فوائد کے لیے دی تھی، اس میں کہا گیا ہے کہ ملزمان نے استثنیٰ پالیسی کی خلاف ورزی کرتے ہوئے اراضی کی الاٹمنٹ کے ذریعہ قومی خزانے کو 14 کروڑ 35 لاکھ روپے کا نقصان پہنچایا۔

News Code 1904406

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 7 + 10 =