فرانس میں مسجد انتظامیہ کو دھمکی آمیز خط موصول

شمالی فرانس کے علاقے ورنون میں قائم جامع مسجد کو ڈاک کے ذریعے ملنے والے خط میں ترک، عرب باشندوں اور مسجد میں پابندی سے آنے والے افراد کو جان سے مارنے کی دھمکیاں دی گئی ہیں۔

مہر خبررساں ایجنسی نے آناتولی کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ شمالی فرانس کے علاقے ورنون میں قائم جامع مسجد کو ڈاک کے ذریعے ملنے والے خط میں ترک، عرب باشندوں اور مسجد میں پابندی سے آنے والے افراد کو جان سے مارنے کی دھمکیاں دی گئی ہیں۔ خط میں لکھا گیا ہے کہ جنگ شروع ہوچکی ہے اور تمہیں سیمیول کی موت کا حساب دینا ہوگا۔ واضح رہے سیمپول اس استاد  کا نام ہے جو ایک کالج میں گستاخانہ خاکوں کی تشہیر کرنے کا مرتکب ہوا تھا اور اسے ایک مسلم نوجوان نے قتل کردیا تھا۔ خط میں حجاب پہننے والی مسلم خواتین کے خلاف انتہائی ہتک آمیز زبان استعمال کی گئی ہے۔

فرانس میں اسلاموفوبیا کی نئی لہر اٹھنے کے بعد ملک بھر میں مساجد کے خلاف نفرت انگیز کارورائیوں کا سلسلہ جاری ہے۔

News Code 1903664

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 3 + 13 =