افغانستان میں جھڑپوں میں 28 شدت پسند اور 8 سیکیورٹی اہلکار ہلاک

افغان فورسز نےملک کےمختلف حصوں میں طالبان کےساتھ ہونے والی جھڑپوں اور کارروائیوں کے دوران 28 طالبان عسکریت پسندوں کو ہلاک اور 13دیگر کو زخمی کر دیا ہے جبکہ ان کارروائیوں میں افغان فورسز کے8اہلکار بھی ہلاک ہوگئے ہیں۔

مہر خبررساں ایجنسی نے فرانسیسی خبررساں ایجنسی کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ افغان فورسز نےملک کےمختلف حصوں میں طالبان کےساتھ  ہونے والی جھڑپوں اور کارروائیوں  کے دوران  28 طالبان عسکریت پسندوں کو ہلاک اور 13دیگر کو زخمی کر دیا ہے جبکہ ان کارروائیوں میں افغان فورسز کے8اہلکار بھی ہلاک ہوگئے ہیں۔

افغانستان کے مغربی صوبہ غور کے مقامی فوجی افسر کے مطابق اب تک ان جھڑپوں میں  20 باغی ہلاک اور 13 دیگر زخمی ہو چکے ہیں جبکہ شاہراہ کےساتھ متعدد دیہات کو طالبان عسکریت پسندوں سے صاف کر دیا گیا ہے۔ اندرابی نے کہا کہ سیکیورٹی فورسز نے فرار ہونیوالےعسکریت پسندوں سے 40موٹرسائیکلیں قبضے میں لے لی ہیں تاہم ان ہلاکتوں کے بارے میں ابھی تک طالبان عسکریت پسندوں کی طرف سے کوئی تبصرہ نہیں کیا گیا۔

دوسری جانب افغانستان کے شمالی صوبہ فریاب کے ضلع خواجہ سبز پوش میں صوبائی پولیس کے بیان کے مطابق ہلاکت خیز جھڑپ کے نتیجے میں 8 شدت پسندوں کی ہلاکت کی تصدیق ہوئی ہے۔ بیان میں کہا گیا کہ طالبان جنگجوؤں نے خواجہ سبز پوش ضلع کے انا بیگ گاؤں میں سکیورٹی چیک پوائنٹس پر حملہ کردیا اور پولیس کی جوابی فائرنگ سے8 شدت پسند موقع پر ہی ہلاک ہو گئے جبکہ 5 زخمی ہوئے، اس موقع پر کئی شدت پسند فرارہونے میں کامیاب ہوگئے جبکہ فائرنگ کے نتیجے میں ایک مقامی دیہاتی زخمی بھی  ہوا۔

افغانستان کے شمالی صوبہ قندوز کے ضلع امام صاحب میں طالبان عسکریت پسندوں نے سیکورٹی چوکیوں پر حملہ کر کے 5 سیکیورٹی اہلکاروں کو ہلاک کر دیا، اس جھڑپ میں عسکریت پسندوں کا بھی جانی نقصان ہوا ہے۔

News Code 1903346

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 1 + 4 =