یورپی یونین نے بیلاروس کے 31 اعلیٰ عہدیداروں پر پابندیاں عائد کردی ہیں

یورپی یونین نے بیلاروس کے 31 اعلیٰ عہدیداروں پر پابندیاں لگا دی ہیں جب کہ پابندیاں ملک میں دھاندلی زدہ انتخابات کے باعث لگائی گئی ہیں جن میں صدر الیگزینڈر لوکا شینکو نے کامیابی حاصل کی تھی۔

 مہر خبررساں ایجنسی نے فرانسیسی خبررساں ایجنسی کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ یورپی یونین نے بیلاروس کے 31 اعلیٰ عہدیداروں پر پابندیاں لگا دی ہیں جب کہ پابندیاں ملک میں صدارتی انتخابات میں دھاندلی کے باعث لگائی گئی ہیں جن میں صدر الیگزینڈر لوکا شینکو نے کامیابی حاصل کی تھی۔ یورپی یونین کے مطابق جن اعلیٰ عہدیداروں پر پابندیاں لگائی گئی ہیں انھوں نے بیلاروس میں دھاندلی زدہ انتخابات کروانے میں کردار ادا کیا ہے۔ 31اعلیٰ عہدیداروں میں ملک کے وزیر داخلہ بھی شامل ہیں جن پر معاشی پابندیاں لگائی گئی ہیں۔ اس کے علاوہ مظاہرین پر تشدد اور گرفتاریوں میں بھی ملوث ہیں۔  یورپی یونین کے وزرائے خارجہ نے بیلاروس کے اعلیٰ عہدیداروں پر پابندیوں کی منظوری دیدی ہے۔

بیلاروس میں اپوزیشن کے مظاہرے جاری ہیں۔ مظاہرین کا مطالبہ ہے کہ صدر الیگزینڈر لوکا شینکو استعفیٰ دیں اور انتخابات میں دھاندلی کی تحقیقات کی جائیں۔ صدر لوکا شینکو 26 سال سے بیلاروس کے صدر چلے آرہے ہیں۔ مظاہرین ملک میں نئے انتخابات کا مطالبہ کر رہے ہیں۔

News Code 1902796

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 6 + 7 =