دہلی میں مسلم کش فسادات میں پولیس نے ہندو شرپسندوں کا ساتھ دیا

عالمی ادارے ایمنسٹی انٹر نیشنل نے بھارتی دارالحکومت دہلی میں ہونے والے مذہبی فسادات میں پولیس کو انسانی حقوق کی خلاف ورزی کا مرتکب قرار دیتے ہوئے کہا ہے۔ دہلی میں مسلم کش فسادات میں بھارتی پولیس نے ہندو شرپسندوں کا ساتھ دیا تھا۔

مہر خبررساں ایجنسی نے ایکس پریس کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ عالمی ادارے ایمنسٹی انٹر نیشنل نے بھارتی دارالحکومت دہلی میں ہونے والے مذہبی فسادات میں پولیس کو انسانی حقوق کی خلاف ورزی کا مرتکب قرار دیتے ہوئے کہا ہے۔ دہلی میں مسلم کش فسادات میں بھارتی پولیس نے ہندو شرپسندوں کا ساتھ دیا تھا۔ اطلاعات کے مطابق جمعہ کو اپنی جاری کردہ رپورٹ میں کہا ہے کہ دہلی پولیس نے احتجاج کرنے والوں کو بری طرح مارا پیٹا، زیر حراست افراد پر بہیمانہ تشدد کیا اور بعض مقامات پر ہندؤ شرپسندوں کے ساتھ مل کر فسادات میں حصہ لیا۔

سرکاری اعداد وشمار کے مطابق فروری میں شہریت کے متنازع قانون کے خلاف ہونے والے احتجاج کے دوران مسلمانوں اور ہندوؤں کے مابین ہونے والے تصادم نے فسادات کی شکل اختیار کرلی جس میں 50 افراد ہلاک ہوئے۔

ایمنسٹی کا کہنا ہے کہ پولیس پر قوانین کی خلاف ورزی کے درجنوں الزامات کے باوجود کوئی ایف آئی آر درج کی گئی اور نہ محکمہ کی سطح پر تحقیقات کا آغاز ہوا۔

واضح رہے کہ بھارت کے دارالحکومت دہلی کی ریاستی پولیس براہ راست مرکزی وزرات داخلہ کے ماتحت آتی ہے اور بھارت میں وزارت داخلہ کا قلم دان حکمران بھارتیہ جنتا پارٹی کے سخت گیر رہنما امیت شاہ کے پاس ہے۔

News Code 1902618

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 2 + 5 =