شہید سلیمانی کا بہیمانہ  قتل امریکہ کی ریاستی دہشت گردی کی واضح مثال ہے

اقوام متحدہ میں ایران کے سفیر اور مستقل نمائندے نے دہشت گردی کے ورچوئل ہفتہ کے اجلاس میں علاقے میں دہشت گردی کے خلاف جنگ کے عظيم ہیرو اور کماںڈر شہید میجر جنرل قاسم سلیمانی کے امریکہ کے ہاتھوں بہیمانہ قتل کو ریاستی دہشت گردی کی واضح مثال قرار دیا ہے۔

مہر خبررساں ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق اقوام متحدہ میں ایران کے سفیر اور مستقل نمائندے مجید تخت روانچی نے دہشت گردی کے ورچوئل ہفتہ کے اجلاس میں علاقے میں دہشت گردی کے خلاف جنگ کے  عظيم ہیرو اور کماںڈر شہید میجر جنرل قاسم سلیمانی کے امریکہ کے ہاتھوں بہیمانہ قتل کو ریاستی دہشت گردی کی واضح مثال قرار دیا ہے۔

یہ اجلاس اقوام متحدہ کے دہشت گردی کے خلاف مرکز کی جانب سے منعقد کیا گیا۔ دہشت گردی کے ورچوئل ہفتہ کے اجلاس سے خطاب میں ایران کے سفیر نے عالمی سطح پر امریکہ کی یکطرفہ پالیسیوں پر شدید تنقید کرتے ہوئے کہا کہ امریکہ دہشت گردی کے خلاف عالمی کوششوں کو ناکام اور کمزور کرنے کی پالیسی پر گامزن ہے۔ دہشت گرد گروہوں کی پشت پر امریکہ کا ہاتھ ہے۔ امریکہ نے دہشت گردی کے خلاف جنگ کے  عظيم ہیرو اور کماںڈر شہید میجر جنرل قاسم سلیمانی کو عراق کے سرکاری دورے کے دوران بغداد ايئر پورٹ پر بہیمانہ طور پر قتل کرکے ریاستی دہشت گردی کا واضح ثبوت دیا ہے۔

اقوام متحدہ میں ایران کے سفیر نے امریکی ہتھیاروں کےذریعہ یمن کے نہتے عوام کے قتل عام کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ امریکہ یمن پر سعودی عرب کی طرف سے مسلط کردہ جنگ کے بھیانک جرائم میں برابر کا شریک ہے۔

News Code 1901504

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 7 + 2 =