ترکی میں جمال خاشقجی کے قتل میں ملوث 20 سعودی ملزم اہلکاروں پر مقدمہ کا آغاز

ترکی کی عدالت نے سعودی صحافی جمال خاشقجی کے بہیمانہ قتل میں ملوث سعودی عرب کے 20 مجرم اہلکاروں کے خلاف مقدمے کی کارروائی کا آغاز کردیا ہے۔

مہر خبررساں ایجنسی نے آناتولی کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ ترکی کی عدالت نے سعودی صحافی جمال خاشقجی کے بہیمانہ قتل  میں ملوث سعودی عرب کے  20 مجرم  اہلکاروں کے خلاف مقدمے کی کارروائی کا آغاز کردیا ہے۔ جمال خاشقجی کے قتل کا مقدمہ سعودی مشتبہ افراد کی عدم موجودگی میں چلایا جارہا ہے، سعودی ملزمان پر جان بوجھ کر اور بہیمانہ طریقے سے قتل کا الزام عائد کیا گیا تھا اور استغاثہ نے ان کے وارنٹ گرفتاری جاری کردیئے تھے۔

جمال خاشقجی کو 12 اکتوبر 2018 میں استنبول میں سعودی قونصل خانے میں وحشیانہ طور پرقتل کیا گیا تھا۔

جمال خاشقجی کی ترک منگیتر بھی سماعت کے موقع پر کمرہ عدالت میں موجود تھیں انہوں نے عدالت کو بتایا کہ جمال کو شادی کیلئے کاغذات کی تصدیق کیلئے قونصل خانے بلوایا گیا تھا۔

جمال خاشقجی کی ترک منگیتر نے عدالت میں امید ظاہر کی ہے مقدمہ چلنے سے پتہ چلے گا کہ جمال خاشقجی کی لاش کہاں ہے۔

ترک منگیتر نے اپنے بیان میں کہا کہ مقدمے کی سماعت سے قتل اس کے محرکات کا پتہ چلے گا، جمال کے قاتلوں کو کیفرِ کردار تک پہنچانے کیلئے ہر ممکن کوشش کریں گے۔ واضح رہےکہ سعودی صحافی جمال خاشقجی کو سعودی عرب کے ولیعہد محمد بن سلمان کے حکم پر استنبول میں سعودی قونصلخانہ میں قتل کردیا گیا تھا اور سعودی عرب نے اب تک اس کی لاش کو بھی اس کے لواحقین کے حوالے نہیں کیا۔

News Code 1901355

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 5 + 9 =