امریکی صدر نے عالمی عدالت کے مخصوص عملے کے خلاف پابندیاں عائد کردیں

امریکی صدر نے انٹرنیشنل کرمنل کورٹ کے مخصوص عملے کے خلاف پابندیاں لگانے کے صدارتی حکم نامہ پر دستخط کر دیئے ہیں۔

مہر خبررساں ایجنسی نے رائٹرز کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ امریکی صدر نے انٹرنیشنل کرمنل کورٹ (آئی سی سی) کے مخصوص عملے کے خلاف پابندیاں لگانے کے صدارتی حکم نامہ پر دستخط کر دیئے ہیں۔

عالمی عدالت کا یہ  عملہ افغانستان میں امریکی فوج کے ممکنہ جنگی جرائم میں ملوث ہونے کی تحقیقات کر رہا ہے۔

ٹرمپ انتظامیہ کا دعوٰی ہے کہ دی ہیگ میں قائم ٹربیونل امریکہ کی قومی خودمختاری کوسلب کرنےکی کوشش میں ہے اورروس آئی سی سی پر اثرانداز ہوکراپنا مفاد حاصل کرنا چاہتا ہے۔

امریکی وزیرخارجہ مائیک پمپئو کا کہنا ہے کہ آئی سی سی کےمخصوص عملے اوران کی فیملی کو امریکہ میں داخلہ سے روک سکیں گےامریکہ کے وزیرخارجہ نے عالمی عدالت انصاف کو کنگرو کورٹ سے بھی تعبیر کیا ہے۔

مائیک پمپئونے کہا کہ امریکیوں کو دھمکایا جا رہا ہے اسلیے وہ بھی خاموش نہیں بیٹھیں گے۔

امریکی وزیر خا رجہ کا کہنا ہےکینگروکورٹ امریکہ کونہیں دھمکا سکتی، جبکہ انٹرنیشنل کرمنل کورٹ نے امریکی پابندیاں مسترد کردی ہیں۔

آئی سی سی کے پراسیکیوٹر2003ءسےسن 2014ءکے دوران افغانستان میں ہوئے ممکنہ جنگی جرائم کی تحقیقات کرنا چاہتے ہیں۔

عالمی عدالت انصاف کا کہناہے کہ اس نے افغانستان میں امریکی فوج کے لوگوں پر تشدد اور انہیں زیادتی کا نشانہ بنانے کے شواہد جمع کرلیے ہیں۔ عدالت کے ترجمان نے کہا کہ آئی سی سی کے افسر امریکی وزیر خارجہ مائیک پمپئو کے بیان کا جائزہ لے رہے ہیں۔

News Code 1900850

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 1 + 5 =