کورونا وائرس سے غریب ممالک کو زیادہ نقصان پہنچےگا

اقوام متحدہ کے ماہرین نے خبردار کیا ہے کہ کورونا وائرس سے غریب ممالک میں نہ صرف معیشت کو خطرات لاحق ہیں بلکہ خوراک کا عدم تحفظ بھی بڑھ رہا ہے۔

مہر خبررساں ایجنسی نے رائٹرز کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ اقوام متحدہ کے ماہرین نے خبردار کیا ہے کہ کورونا وائرس سے غریب ممالک میں نہ صرف معیشت کو خطرات لاحق ہیں بلکہ خوراک کا عدم تحفظ بھی بڑھ رہا ہے۔ 

اطلاعات کے مطابق غریب ممالک میں معاشی صورتحال کی وجہ سے مسائل میں اضافہ ہو رہا ہے اور ہر شخص تک خوراک کی رسائی کا معاملہ خراب ہو رہا ہے۔ 

اقوام متحدہ کے ماہرین نے خبردار کیا ہے کہ کورونا وائرس سے غریب ممالک میں نہ صرف معیشت کو خطرات لاحق ہیں بلکہ خوراک کا عدم تحفظ بھی بڑھ رہا ہے۔  عالمی ادارہ خوراک (ورلڈ فوڈ پروگرام) نے اپنی معاشی آؤٹ لوک رپورٹ میں بتایا ہے کہ خوراک سے جڑے خطرات اور سلامتی کے معاملات پر بدستور گہرے بادل چھائے ہیں اور ان کی وجہ کورونا وائرس کی وجہ سے پیدا ہونے والی صورتحال ہے۔

خطرات کا سامنا کرنے والے خطوں میں افریقہ سر فہرست ہے جو پہلے ہی شدید غربت کا شکار ہے۔ رپورٹ میں بتایا گیاہے کہ 2020ء میں مجموعی طور پر 26؍ کروڑ 50؍ لاکھ سے زائد افراد بھوک کا شکار ہو سکتے ہیں۔ یہ تعداد 2019ء کی تعداد کا دوگنا زیادہ ہے۔

 ماہرین کے مطابق جس انداز سے معاشی بحران کم آمدنی والی معیشتوں کو نقصان پہنچا رہا ہے اس سے واضح طور پر اثرات کی پیشگوئی کی جا سکتی ہے۔

 ورلڈ فوڈ پروگرام کی اکنامکس اینڈ مارکیٹس یونٹ کی سربراہ سوزانا سینڈ اسٹروم کا کہنا ہے کہ ایسے ممالک جن کا انحصارصرف سیاحت، غیر ملکی زر مبادلہ، خوراک کی درآمد اور بنیادی ضروریات کی چیزوں کی برآمد پر ہے وہ سخت صورتحال کا سامنا کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ خراب صورتحال کا سامنا کرنے والے ممالک کو ایک نہیں بلکہ ایک ہی مسئلے کی وجہ سے پیدا ہونے والے دیگر مسائل کا سامنا بھی ہے۔ 

News Code 1900601

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 2 + 11 =