برطانیہ میں موجود پاکستانی نژاد برطانوی شہریوں کو کورونا وائرس کا زیادہ خطرہ

ایک نئی تحقیق میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ برطانیہ میں موجود پاکستانی نژاد برطانوی شہریوں کے دیگر سفید فام برطانوی شہریوں کے مقابلے میں کورونا وائرس سے متاثر ہونے اور مرنے کے زیادہ خطرات ہیں۔

مہر خبررساں ایجنسی نے ڈان کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ ایک نئی تحقیق میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ برطانیہ میں موجود پاکستانی نژاد برطانوی شہریوں کے دیگر سفید فام برطانوی شہریوں کے مقابلے میں کورونا وائرس سے متاثر ہونے اور مرنے کے زیادہ خطرات ہیں۔

اطلاعات کے مطابق برطانیہ میں 7 پاکستانی ڈاکٹرز کی ہلاکت کے بعد انسٹیٹیوٹ آف فسکل اسٹڈیز کی ایک نئی جامع تحقیق میں انکشاف کیا گیا کہ پاکستان نژاد برطانوی اور برطانوی سیاہ فام افریقیوں کی کورونا وائرس سے ہلاکت کی شرح سفید فام کی آبادی کے مقابلے میں 2.5 گنا زیادہ ہے۔ واضح رہے کہ کورونا وائرس برطانیہ میں پاکستانی برادری کے ڈاکٹرز کے علاوہ دیگر نرسز اور میڈٰکل اسٹاف کی بھی جان لے چکا ہے۔

لندن اسکول آف اکنامکس کے پروفیسر لوسنڈا پلیٹ اور ریسرچ اکنامسٹ توس وارسک کی مرتب کردہ مشترکہ رپورٹ، پبلک ہیلتھ انگلینڈ کی جانب سے اکٹھا کیے گئے ڈیٹا کے تجزیہ میں کہا گیا کہ کورونا وائرس کے تمام نسلوں پر ایک جیسے اثرات نہیں ہیں۔

اس کے کچھ اہم نتائج کے مطابق سیاہ کیریبین آبادی کی فی فرد ہسپتال میں کورونا وائرس سے اموات سب سے زیادہ ہیں جبکہ سفید فام برطانوی اکثریت سے ان کی اموات کی تعداد تین گنا زیادہ ہے، اس کے علاوہ کچھ اقلیتی گروہوں جن میں پاکستانی اور سیاہ فام افریقی شامل ہیں ان کی آبادی کی اوسط سے ہسپتال میں فی فرد ہلاکتوں کی تعداد اتنی ہی دیکھی گئی ہے جبکہ بنگلہ دیشیوں کی اموات کم ہیں۔ رپورٹ میں حیرت انگیز نتائج کو ایک گراف میں دکھایا گیا ہے جس میں بتایا گیا کہ برطانیہ میں 12 لاکھ پاکستانی آبادی کے مقابلے میں 4 کروڑ 23 لاکھ آبادی والے سفید برطانوی لوگوں کی ہسپتال میں اموات کافی کم ہیں۔

News Code 1899886

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 1 + 16 =