برطانوی عدالت نے ابو ظہبی کے ولیعہد کو مجرم قراردیدیا

برطانوی عدالت نے ابو ظہبی کے ولیعہد اور متحدہ عرب امارات کے نائب صدر اور وزیر اعظم محمد بن راشد المکتوم کو اپنی اہلیہ شہزادی حیا کو ڈرانے دھمکانے اور اپنی دو بیٹیوں کو اغوا کرانے کے کیس میں مجرم قراردیدیا ہے۔

مہر خبررساں ایجنسی نے رائٹرز کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ برطانوی عدالت نے ابو ظہبی کے ولیعہد اور متحدہ عرب امارات کے نائب صدر اور وزیر اعظم محمد بن راشد المکتوم کو اپنی اہلیہ شہزادی حیا کو ڈرانے دھمکانے اور اپنی دو بیٹیوں کو اغوا کرانے کے کیس میں مجرم قراردیدیا ہے۔

اطلاعات کے مطابق امیرِ دبئی محمد بن راشد المکتوم کی چھٹی بیوی اور اردن کے سابق بادشاہ عبداللہ کی بیٹی 45 سالہ حیا بنت الحسین گزشتہ برس کے وسط میں گھر سے فرار ہو کر پہلے جرمنی پہنچیں اور پناہ کی درخواست جمع کرائی تھی جب کہ برطانوی شہریت بھی رکھنے کے سبب انہوں نے برطانوی عدالت میں اپنی بچوں کی کفالت کے لیے متحدہ عرب امارات کے نائب صدر و وزیراعظم محمد بن راشد المکتوم کیخلاف درخواست دائر کی تھی۔ برطانوی ہائی کورٹ کے جج اینڈریو میک فارلین نے مقدمے کی کئی سماعتوں کے بعد آج فیصلہ سناتے ہوئے کہا کہ شیخ محمد بن راشد نے 2018 سے اہلیہ شہزادی حیا کیساتھ دھمکی آمیز رویہ اختیار کیے رکھا اور ڈرانے دھمکانے کے لیے سرکاری وسائل کا بھی استعمال کیا جب کہ ایک اور اہلیہ سے ہونے والی دو بیٹیوں شمسہ اور لطیفہ کو بھی اغوا کیا اور جبراً اپنے فیصلے مسلط کیے۔ ان دونوں بیٹیوں سے متعلق شواہد بھی شہزادی حیا نے عدالت کو پیش کیے تھے۔ عدالت نے مقدمے کے فیصلے کو عام نہ کرنے کی حکمراں دبئی محمد بن راشد المکتوم کی درخواست کو مسترد کرتے ہوئے کہا کہ یہ فیصلہ عوامی مفاد میں ہے اور اسے عام کیا جانا بے حد ضروری بھی ہے جب کہ شہزادی حیا بنت الحسین کے بچوں کو بھی برطانیہ میں ان کے ماں کے پاس ہی رہنے کو کہا گیا ہے۔ امیر دبئی نے بچوں کی حوالگی کے لیے بھی عدالت سے استدعا کی تھی جسے مسبرد کردیا گیا ہے۔

News Code 1898390

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 2 + 2 =