پاکستان کا کورونا وائرس کے پھیلاؤ کے دو ماہ بعد ہیلتھ ڈیکلیریشن کا اعلان

پاکستان میں سول ایوی ایشن نے پاکستان آنے والے مسافروں کے لیے کورونا وائرس کے پھیلاؤ کے دو ماہ بعد ہیلتھ ڈیکلیریشن لازمی قرار دیدیتے ہوئے کہا ہے کہ فارم جمع نہ کروانے والی ائیر لائنز کے خلاف کارروائی ہوگی۔

مہر خبررساں ایجنسی نے پاکستانی ذرائع کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ پاکستان میں سول ایوی ایشن نے پاکستان آنے والے مسافروں کے لیے کورونا وائرس کے پھیلاؤ کے دو ماہ بعد  ہیلتھ ڈیکلیریشن لازمی  قرار دیدیتے ہوئے کہا ہے کہ فارم جمع نہ کروانے والی ائیر لائنز کے خلاف کارروائی ہوگی۔ ترجمان سول ایوی ایشن کے مطابق ملک بھر کے ائیرپورٹس پر کورونا وائرس سے بچاؤ اور احتیاطی تدابیر سے متعلق اقدامات پر سختی سے عملدرآمد شروع کردیا گیا ہے اور بیرون ملک سے آنے والے تمام مسافروں سے ہیلتھ ڈیکلیریشن فارم بھروانے کا عمل باقاعدہ شروع کردیا ہے۔ ترجمان سول ایوی ایشن کا کہنا ہے کہ وزارت صحت کی جانب سے پاکستان میں داخل ہونے کے لیے ہیلتھ ڈکلیریشن کا اردو میں فارم تیار کرلیا ہے، اے ٹی سی نے بیرون ملک سے آنے والی پروازوں کے مسافروں کی آگہی کے لیے الگ سے ہدایات جاری کرنا شروع کردیں، جہاز کی لینڈنگ سے پہلے پائلٹ جہازوں میں مسافروں کو ہیلتھ ڈکلیریشن فارم بھرنے سے متعلق بار بار آگاہ کریں گے۔ ترجمان کے مطابق اردو میں جاری کیے گئے فارم میں مسافروں کی آبادیاتی معلومات، سفری تاریخ اور طبی حالت کے متعلق معلومات دینا پڑیں گی، فارم میں پچھلے 14 دن میں چین اور 6 دن میں افریقا یا جنوبی امریکا کے سفر سے متعلق بتانا ہوگا، مسافر کو بخار، کھانسی اور سانس میں تنگی کے بارے بھی فارم میں ڈیکلئیر کرنا ہوگا۔ ذرائع کے مطابق کورونا وائرس کو پھیلے ہوئے دو ماہ ہوگئے ہیں اور پاکستانی حکام نے اب ہیلتھ ڈیکلریشن فارم جمع کرانے کی سفارش کی ہے جبکہ اس دو ماہ کے عرصہ میں ہزاروں مسافر پاکستان پہنچے ہیں۔

News Code 1898123

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 6 + 7 =