صدی معاملے کی شکست و ناکامی ابتدا ہی سے نمایاں ہے

اسلامی جمہوریہ ایران کے دارالحکومت تہران میں نماز جمعہ کے خطیب نے کہا ہے کہ صدی معاملے کی ابتدا ہی سے شکست نمایاں ہے۔

مہر خبررساں ایجنسی کے نامہ نگار کی رپورٹ کے مطابق اسلامی جمہوریہ ایران کے دارالحکومت تہران میں نماز جمعہ حجۃ الاسلام کاظم صدیقی کی امامت میں منعقد ہوئی ، جس میں لاکھوں مؤمنین نے شرکت کی ۔ خطیب جمعہ نے تقوی اور پرہیزگاری کی اہمیت پر تاکید کرتے ہوئے کہا کہ تقوی دنیا اور آخرت میں سلامتی کا ضامن ہے جو لوگ زندگی میں ہمیشہ تقوی اختیار کرتے ہیں وہ مرضی مولا کے حصول میں کامیاب ہوجاتے ہیں اور یہی لوگ دنیا اور آخرت میں فلاح اور نجات کے حقدار ہیں۔

خطیب جمعہ نے حضرت فاطمہ زہرا سلام اللہ علیھا کی ولادت باسعادت کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ حضرت زہرا سلام اللہ علیھا عالم بشریت کے لئے بہترین نمونہ ہیں ۔ حضرت امام زمانہ (عج) نے انھیں اپنے لئے نمونہ قراردیا ہے پیغمبر اسلام (ص) فرماتے ہیں کہ فاطمہ (س)  بہشت کی خوشبو ہیں جب مجھے بہشت کی خوشبوکی ضرورت ہوتی ہے تو میں فاطمہ (س) کی خوشبو استشمام کرتا ہوں۔

حجۃ الاسلام صدیقی نے خطے کے لئے امریکہ کی نت نئی سازشوں اور فلسطین کے بارے میں امریکی صدر کے نئےسازشی معاملے کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ صدی معاملے کی شکست  ابتدا ہی سےنمایاں ہے کیونکہ اس میں فلسطینیوں کے حقوق کو نظر انداز کیا گیا ہے یہی وجہ ہے کہ فلسطینیوں نے اسے پہلے ہی مسترد کردیا ہے اور اس کے بعد امت مسلمہ نے بھی امریکی صدر کےصدی معاملے کو ٹھکرا دیا ہے ۔ امریکہ کے حامی چند عرب ممالک اس بدنام زمانہ صدی معاملے کی حمایت کررہے ہیں جن میں سعودی عرب اور امارات شامل ہیں آج سعودی عرب اور امارات کی دنیائے اسلام میں کوئی حیثیت نہیں ۔ مسلمان انھیں امریکہ کا غلام اور نوکر سمجھتے ہیں اور حقیقت بھی یہی ہے۔

News Code 1897843

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 6 + 1 =