حافظ سعید کو دہشت گردی کے مقدمے میں 11 سال قید کی سزا

پاکستان میں انسداد دہشت گردی کی عدالت نے لشکر طیبہ کے سابق اور جماعت الدعوہ کے موجودہ سربراہ حافظ محمد سعید کو دہشت گردی کے مقدمے میں 11 سال قید اور 30 ہزار روپے جرمانے کی سزا سنادی۔

مہر خبررساں ایجنسی نے ایس پریس کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ پاکستان میں انسداد دہشت گردی کی عدالت نے لشکر طیبہ کے سابق اور جماعت الدعوہ کے موجودہ سربراہ حافظ محمد سعید کو دہشت گردی کے مقدمے میں 11 سال قید اور 30 ہزار روپے جرمانے کی سزا سنادی۔ انسداددہشتگردی کی خصوصی عدالت کے جج  ارشد حسین بھٹہ نے جماعت الدعوہ کے سربراہ حافظ محمد سعید کے خلاف دو کیسز میں محفوظ فیصلہ سنا دیا۔

عدالت نے حافظ سعید سمیت دو ملزمان کو دو مقدمات میں ٹرائل مکمل ہونے پر ساڑھے پانچ پانچ سال قید اور 15 ہزار روپے جرمانے کی سزا کا حکم دے دیا۔ عدالت نے مجموعی طور پر حافظ سعید کو 11 سال قید اور 30 ہزار روپے جرمانے کی سزا سنائی۔

حافظ محمد سعید کیخلاف محکمہ انسداد دہشت گردی (سی ٹی ڈی) نے غیر قانونی فنڈنگ کے الزام میں مقدمہ درج کر رکھا تھا۔ دونوں کیسز میں حافظ سعید کے خلاف 23 گواہوں نے بیانات قلمبند کرائے تھے۔ حافظ سعید پر دہشت گردوں کی مالی معاونت کرنے کا دعوی ہے۔

News Code 1897798

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 2 + 0 =