اسرائیل اور سعودی عرب کے درمیان براہ راست سفری رابطہ برقرار

اسرائیلی حکومت نے اپنے شہریوں کو مذہبی فرض کی ادائیگی اور تجارت کے لیے براہ راست سعودی عرب کے سفر کی اجازت دیدی ہے ۔

مہر خبررساں ایجنسی نے غیر ملکی ذرائع کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ اسرائیلی حکومت نے اپنے شہریوں کو مذہبی فرض کی ادائیگی اور تجارت کے لیے براہ راست سعودی عرب کے سفر کی اجازت دیدی ہے جب کہ اس سے قبل اردن کا راستہ اختیار کرنا پڑتا تھا۔ اطلاعات کے مطابق سعودی عرب اور اسرائیل کے درمیان وزارت خارجہ کی سطح کے ہونے والے مذاکرات کامیاب ہوگئے ہیں جس کے بعد اب اسرائیلی شہریوں کو مذہبی فرائض کی ادائیگی اور تجارت کیلیے سعودی عرب جانے کی اجازت دیدی گئی ہے۔ اس سے قبل اسرائیلی شہریوں کو سعودی عرب جانے کی اجازت نہیں تھی جس کی وجہ سے شہریوں کو اردن کے راستے سعودی عرب جانا پڑتا تھا تاہم اب 90 دن کے لیے براہ راست سعودی عرب جا سکتے ہیں۔ سعودی عرب اس سے قبل اسرائیل کے ساھ خفیہ مذاکرات کرتا رہا ہے لیکن اب سعودی عرب اسرائیل کی مکمل طور پر قربت اختیار کرنے کی کوشش کررہا ہے۔ سعودی عرب مسئلہ فلسطین کے حل میں سب سے بڑی رکاوٹ تصور کیا جاتا ہے کیونکہ وہ فلسطینیوں پر امیرکی اور اسرائیلی ایجنڈے کو مسلط کرنے کی کوشش کررہا ہے۔

News Code 1897365

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 2 + 2 =