کشمیر کے مسئلہ پر بھارت اور پاکستان میں جنگ ہوسکتی ہے

پاکستان کے وزیر اعظم عمران خان نے کہا ہے کہ بھارت غلط راستے پر چل رہا ہے، دنیا میں کسی اور جگہ جنگ کے ایسے خطرات نہیں جیسے کشمیر میں ہیں، کشمیر کے معاملے پر دو ایٹمی طاقتوں کے درمیان جنگ ہوسکتی ہے۔

مہر خبررساں ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق بی بی سی کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے پاکستان کے وزیر اعظم عمران خان نے کہا ہے کہ بھارت غلط راستے پر چل رہا ہے، دنیا میں کسی اور جگہ جنگ کے ایسے خطرات نہیں جیسے کشمیر میں ہیں، کشمیر کے معاملے پر دو ایٹمی طاقتوں کے درمیان جنگ ہوسکتی ہے۔عمران خان نے کہا کہ اگر یورپی یونین، اقوام متحدہ یا امریکہ مداخلت نہیں کریں گے تو چیزیں برے طریقے سے مزید گمبھیر ہوجائیں گی، اگر برصغیر میں کچھ غلط ہوتا ہے تواس کے اثرات کہیں دور تک ہوں گے، میرا فرض ہے کہ ایک ایسے فورم کو اس بارے میں آگاہ کروں جسے دوسری عالمی جنگ کے بعد قائم کیا گیا تھا تاکہ کہیں بھی جنگ کو ہونے سے روکا جائے۔ عمران خان نے پانچ اگست کو مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت کے خاتمہ کے بعد بھارتی حکومت کا نازیوں سے موازنہ کرنے کے اپنے بیان کو درست قراردیتے ہوئے کہا کہ اس وقت انڈیا میں آر ایس ایس کا انتہا پسند نظریہ رکھنے والی حکومت ہے، بھارتی حکومت وہاں مسلمانوں کو ختم کرنا چاہتی ہے، جیسے نازی پارٹی نے یہودیوں کوختم کیا تھا، مہاتما گاندھی کو آر ایس ایس نے قتل کیا، جس تنظیم پربھارت میں تین بار پابندی لگائی گئی، افسوس اس نے ایک ارب سے زائد آبادی والے ملک پر قبضہ کر لیا ہے۔وزیر اعظم نے کہا کہ مذہبی اقلیتوں کے ساتھ تفریق کے معاملے میں پاکستان کا موازنہ بھارت سے نہیں کیا جاسکتا، ایسی تفریق پاکستانی حکومت کی پالیسی نہیں اور نہ یہ ہمارے آئین میں شامل ہے لیکن بھارت میں لوگ خوف زدہ ہیں۔ ذرائع کے مطابق کشمیر کے مسئلہ پر پاکستان اور بھارت کے درمیان دو طرفہ مذاکرات سے مسئلہ حل نہیں ہوگا اور نہ ہی ان میں اس مسئلہ کو حل کرنے کی صلاحیت موجود ہے لہذا اس مسئۂہ میں اقوام متحدہ کو بڑھ کر اپنی ذمہ د اریوں پر عمل کرنا چاہیے۔

News Code 1897305

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 5 + 12 =