فرنیچر کمپنی کا دو سالہ بچے کی ہلاکت پر چار کروڑ 60 لاکھ ڈالر زرِ دینے کا اعلان

فرنیچر کے مشہور برانڈ آئیکیا نے اپنی درازوں والی میز گرنے کے نتیجے میں ہلاک ہونے والے بچے کے والدین کو چار کروڑ 60 لاکھ ڈالر زرِ تلافی ادا کرنے کا اعلان کیا ہے۔

مہر خبررساں ایجنسی نے غیر ملکی ذرائع کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ فرنیچر کے مشہور برانڈ آئیکیا نے اپنی درازوں والی میز گرنے کے نتیجے میں ہلاک ہونے والے بچے کے والدین کو چار کروڑ 60 لاکھ ڈالر زرِ تلافی ادا کرنے کا اعلان کیا ہے۔ اطلاعات کے مطابق کیلیفورنیا کے ایک خاندان کے دو سالہ بچے جوزف ڈیوڈک پرآئیکیا کمپنی کی تیارکردہ درازوں والی میز گرگئی تھی۔ اس حادثے میں ننھا جوزف ہلاک ہوگیا تھا۔ بچے کے لواحقین نے الزام عائد کیا تھا کہ کمپنی کی تیار کردہ درازیں محفوظ نہیں اور لڑھک سکتی ہیں۔ بچے کی ہلاکت بھی اسی وجہ سے ہوئی ہے۔

جوزف ڈیوڈک کے اہلِ خانہ کے وکیل نے کہا کہ جس ماڈل کی دراز سے بچہ ہلاک ہوا ہے وہ ٹھیک سے کھڑی نہیں ہوسکتی تھی اور ہلکی سی جنبش سے گرجاتی تھی۔  ادھر امریکی صارفین کے تحفظ کے کمیشن نے کہا ہے کہ سویڈن کی اس مشہور فرنیچر کمپنی کی مصنوعات سے صرف امریکہ میں ہی آٹھ افراد ہلاک ہوئے ہیں جن میں اکثریت بچوں کی ہے۔ وکیل ڈینیئل مان نے کہا کہ اب بھی لاکھوں درازیں پوری دنیا میں موجود ہیں جنہیں کمپنی نے واپس نہیں لیا اور وہ اب بھی استعمال میں ہیں۔

دراز کو اگر کسی دیوار کے سہارے کھڑا نہ کیا جائے تو وہ آگے یا پیچھے لڑھک سکتی ہے اور اسی حادثے میں جوزف کی جان گئی ہے۔ دوسری جانب آئیکیا نے رضامندی ظاہر کی ہے کہ وہ اس ماڈل کو گاہکوں سےواپس لینے کی کوشش کرے گی لیکن اس سے قبل تمام صارفین سے رابطہ کرکے بذریعہ ای میل انہیں خطرات سے آگاہ کیا جائے گا۔

News Code 1896889

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 7 + 6 =