تہران میں سپاہ اسلام کے عظیم الشان کمانڈر شہید قاسم سلیمانی کی تشییع جنازہ

دنیائے اسلام کے عظيم اسلامی کمانڈر شہید میجر جنرل سلیمانی کا پیکر پاک تشییع کے لئے تہران پہنچ گيا ہے آج تہران میں اسلام کے عظیم سردار اور کمانڈر کو الوداع کرنے کے لئےکئی ملین افراد حاضر ہوئےہیں۔ ایران کے اعلی سول اور فوجی حکام بھی موجود ہیں، فلسطینی تنظیم حماس کے سابق وزیر اعظم اور خارجہ پالیسی کے سربراہ اسماعیل ہنیہ نے بھی تہران کے عظیم اجتماع سے خطاب کیا ہے۔

مہر خبررساں ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق دنیائے اسلام کے عظيم اسلامی کمانڈر شہید میجر جنرل سلیمانی کا پیکر پاک ، تشییع کے لئے تہران پہنچ گيا ہے آج تہران میں اسلام کے عظیم سردار اور کمانڈر کی تشییع جنازہ میں کئی ملین افراد شریک ہیں۔ ایران کے اعلی سول اور فوجی حکام بھی موجود ہیں۔

تہران یوینورسٹی کی اطراف کی تمام سڑکیں قاسم سلیمانی اور ابو مہدی مہندس کے عاشقوں سے مملو ہیں ۔ لوگ کفن پہن کر تشییع جنازہ میں شریک ہوئے ہیں اور شہید قاسم سلیمانی کا امریکہ خونخوار سے سخت انتقام لینے کے لئے آمادہ ہیں۔ اطلاعات کے مطابق شہید میجر جنرل قاسم سلیمانی ، شہید ابو مہدی مہندس اور دیگر شہیدوں کے پاک پیکروں پر رہبر معظم انقلاب اسلام حضرت آیت اللہ العظمی خامنہ ای نماز جنازہ ادا کریں گے۔ اس سے قبل عراق کے شہروں  بغداد، کاظمین، کربلا،اور نجف اشرف میں شہید میجر جنرل قاسم سلیمانی اور ابو ہمدی مہندس کی تشییع جنازہ میں کئی ملین افراد نے شرکت کی ، اتوار کی صبح اہواز کے غیور اور بہادر عوام نے شہید قاسم سلیمانی اور ان کے شہید ساتھیوں کو خراج عقیدت پیش کیا اور اتوار بعد از ظہر مشہد مقدس میں کئی ملین افراد نے شہید قاسم سلیمانی اور شہید ابو مہدی مہندس کے ساتھ تجدید عہد کیا اور آج تہران میں کئی ملین افراد اسلام کے مایہ ناز اور عظیم الشان کمانڈر کو الوداع کرنے اور اس کے مشن کو جاری رکھنے کے عہد کے ساتھ جمع ہوئے ہیں بہت سے لوگوں نے کفن پہنا رکھا ہے کئی ملین افراد نے شہید قاسم سلیمانی اور شہید مہدی مہندس کا امریکہ سے سخت انتقام لینے کا عہد کیا ہے۔ تہران کے عظيم اجتماع سے فلسطینی تنظیم حماس کے سابق وزیر اعظم اسماعیل ہنیہ نے بھی ایرانی عوام سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ہم قاسم سلیمانی کے مشن پر گامزن رہیں گے شہید قاسم سلیمانی کا مشن بیت المقدس کی آزادی کا مشن  تھا ۔ شہید قاسم سلیمانی شہید بیت المقدس ہیں ۔ ہم انھیں سلام پیش کرتے ہیں۔

News Code 1896791

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 5 + 1 =