بھارت کا مقبوضہ کشمیر سے پیرا ملٹری فوج کی 72 کمپنیوں کو واپس بلانے کا فیصلہ

بھارت کی ہندو انتہا پسند حکومت نے ملک بھر میں جاری مظاہرین کو کچلنے کے لئے مقبوضہ جموں کشمیر سے پیرا ملٹری فوج کی 72 کمپنیوں کو واپس بلانے کا فیصلہ کرلیا ہے۔

مہر خبررساں ایجنسی نے بھارتی ذرائع کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ بھارت کی ہندو انتہا پسند حکومت نے ملک بھر میں جاری مظاہرین کو کچلنے کے لئے مقبوضہ جموں کشمیر سے پیرا ملٹری فوج کی 72 کمپنیوں کو واپس بلانے کا فیصلہ کرلیا ہے۔ بھارتی وزارت داخلہ نے چیف اور ہوم سیکرٹری سری نگر کو احکامات جاری کر دیئے ہیں۔نوٹیفکیشن کے مطابق کشمیر سے نکالی گئی کمپنیاں دیگر جگہوں پر ڈیوٹی سرانجام دیں گیں۔ ہم نیوز کے مطابق ہر کمپنی میں 100 فوجی اہلکار ہیں اور تقریبا 7 ہزار فوجیوں کو جموں کشمیر سے نکال کر بھارت کے مختلف علاقوں میں تعینات کیا جائے گا۔پولیس فورس کی 24 کمپنیوں سمیت بارڈر سیکیورٹی فورس(بی ایس ایف)، انڈو تبتین بارڈر پولیس(آئی ٹی بی پی)، سنٹرل انڈسٹریل سکیورٹی فورس(سی آئی ایس ایف) اور ساشاسترا سیما بل(ایس ایس بی) سے 12،12 کمپنیوں کو واپس بلایا جائے گا۔پیراملٹری فورس کی مذکوربالا کمپنیاں پانچ اگست کو ارٹیکل 370 ختم کرنے کے بعد جموں و کشمیر میں تعینات کی گئی تھیں۔ دسمبر2019 کے آغاز میں بھی اس قسم کی 20 کمپنیوں کو واپس بلایا گیا تھا۔

خیال رہے کہ مقبوضہ کشمیر میں بھارت کا مسلط کردہ فوجی محاصرہ مسلسل 143ویں روز بھی جاری ہے۔ وادی کشمیر، جموں اور لداخ کے مسلم اکثریتی علاقوں میں نظام زندگی بدستور مفلوج ہے۔ ذرائع کے مطابق مقبوضہ کشمیر واپس بلائی گئے فوجی دستوں کو ہندوستان بھر میں جاری مظاہرین کو کچلنے کے لئے استعمال کیا جاسکتا ہے۔

News Code 1896490

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 8 + 8 =