پرویز مشرف کے خلاف فیصلہ غیر قانونی، غیر آئینی اور غیر شرعی

پاکستان کے وزیراعظم عمران خان نے سابق صدر جنرل (ر) پرویز مشرف کے خلاف سنگین غداری کیس کے فیصلے کو غیر قانونی، غیر آئینی اورغیر شرعی قرار دے دیا ہے۔

مہر خبررساں ایجنسی نے ایکس پریس کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ پاکستان کے وزیراعظم عمران خان نے سابق صدر جنرل (ر) پرویز مشرف کے خلاف سنگین غداری کیس کے فیصلے کو غیر قانونی، غیر آئینی اورغیر شرعی قرار دے دیا ہے۔ اسلام آباد کی خصوصی عدالت کی جانب سے سنگین غداری کیس کا تفصیلی فیصلہ جاری ہونے کے بعد اسلام آباد میں وزیراعظم عمران خان کی زیرِصدارت میں اجلاس ہوا ، جس میں پاکستانی وزیر اعظم عمران خان نے فیصلے کو غیر قانونی، غیر آئینی اورغیر شرعی قرار دیتے ہوئے کہا کہ یہ فیصلہ انسانی حقوق کی پامالی پر بھی مبنی ہے کسی بھی مہذت معاشرے میں کسی کی لاش کو لٹکانے کا فیصلہ نہیں دیا جاتا ۔اس اجلاس کے دوران قانونی ٹیم نے وزیراعظم کو بریفنگ میں بتایا گیا کہ خصوصی عدالت کا یہ فیصلہ انسانی حقوق کی پامالی ہے۔

ذرائع کے مطابق اس موقع پر وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ خصوصی عدالت کا فیصلہ غیر آئینی، غیر قانونی اور غیر شرعی ہے۔

وزیراعظم کا یہ بھی کہنا تھا کہ اس فیصلے میں جو الفاظ استعمال کیے گئے ماضی میں اس کی مثال نہیں ملتی، ملک میں اداروں کا ٹکراؤ پیدا نہیں ہونے دیں گے۔

ذرائع کے مطابق وزیراعظم نے قانونی ٹیم کو جسٹس وقارسیٹھ کیخلاف ریفرنس تیار کرنے کی ہدایت کردی ہے جب کہ وزیرقانون فروغ نسیم کو خصوصی عدالت کے فیصلے پر ردعمل تیار کرنے کی ہدایت کی ہے۔ واضح رہے کہ اسلام آباد کی خصوصی عدالت نے سنگین غداری کیس میں جنرل (ر) پرویز مشرف کو سزائے موت دینے کا فیصلہ سنایا تھا۔

News Code 1896332

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 3 + 1 =