لاہور میں امراض قلب کے اسپتال پر وکلا کے حملے میں پولیس کی کوتاہی کا انکشاف

پاکستان کے شہر لاہور میں امراض قلب کے اسپتال پر پاکستانی وکلاء کے حملے کے نتیجے میں 6 افراد ہلاک ہوگئے تھے جبکہ وکلاء نے اسپتال میں بڑے پیمانے پر توڑ پھوڑ کی ، اس واقعہ میں پولیس کی غفلت اور کوتاہی کا انکشاف ہوا ہے۔

مہر خبررساں ایجنسی نے ایکس پریس کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ پاکستان کے شہر لاہور میں امراض قلب کے اسپتال پر پاکستانی وکلاء کے حملے کے نتیجے میں 6 افراد ہلاک ہوگئے تھے جبکہ وکلاء نے اسپتال میں بڑے پیمانے پر توڑ پھوڑ کی ، اس واقعہ میں پولیس کی غفلت اور کوتاہی کا انکشاف ہوا ہے۔ اطلاعات کے مطابق پنجاب انسٹی ٹیوٹ آف کارڈیالوجی پر وکلا کے حملے کی تحقیقات کرنے والی کمیٹی کے سربراہ وزیر قانون پنجاب راجہ بشارت نے اپنی سفارشات مرتب کرلی ہیں، جو پیر کو وزیر اعلیٰ پنجاب کو ارسال کی جائیں گی۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ واقعے کے بعد صورت حال کے جائزے کے لیے طلب کئے گئے پہلے اجلاس میں ہی پولیس کے اعلی حکام کی وزیر قانون کی جانب سے سرزنش کی گئی تھی، وہ اس بات پر برہم تھے کہ پولیس نے دو گھنٹے تک وکلا کو روکنے کی کوئی حکمت عملی ہی نہیں بنائی اور نا ہی انہیں روکنے کی کوئی کوشش کی۔ اس کے علاوہ وزیراعلی کی زیرصدارت اعلی ترین اجلاسوں میں بھی انتظامی غفلت پر اظہار ناراضی کیا گیا۔

محکمہ قانون پنجاب کے ذرائع کا کہنا ہے کہ راجہ بشارت کی سفارشات کی روشنی میں پولیس کے متعلقہ اعلی حکام کی غفلت کی بھی الگ سے انکوائری کاامکان ہے۔

News Code 1896202

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 4 + 3 =