افغانستان میں جاپانی این جی او کے سربراہ سمیت 6 افراد ہلاک

افغانستان میں صحت عامہ کے لیے متحرک جاپان کی غیر سرکاری تنظیم کے سربراہ کی گاڑی پر حملہ کیا گیا ہے جس کے نتیجے میں ڈاکٹر ٹیٹسو ناکامورا اپنے ڈرائیور اور 4 باڈی گارڈز کے ہمراہ ہلاک ہوگئے۔

مہر خبررساں ایجنسی نے فرانسیسی خبررساں ایجنسی کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ افغانستان میں صحت عامہ کے لیے متحرک جاپان کی غیر سرکاری تنظیم کے سربراہ کی گاڑی پر حملہ کیا گیا ہے جس کے نتیجے میں ڈاکٹر ٹیٹسو ناکامورا اپنے ڈرائیور اور 4 باڈی گارڈز کے ہمراہ ہلاک ہوگئے۔  اطلاعات کے مطابق افغانستان کے مشرقی صوبے ننگرہار میں جاپان سے تعلق رکھنے والی ایک این جی او کی گاڑی پر فائرنگ کی گئی ہے جس کے نتیجے میں گاڑی میں موجود این جی او " پیس میڈیکل سروس"  کے سربراہ ڈاکٹر ٹیٹسو ناکامورا شدید زخمی ہوگئے جب کہ حملے میں اُن کے ڈرائیور اور 4 باڈی گارڈز موقع پر ہی ہلاک ہوگئے۔ ڈاکٹر ٹیٹسو ناکامورا کو فوری طور پر قریبی اسپتال منتقل کیا گیا جہاں طبی امداد کے بعد حالت تشویشناک ہونے پر جلال آباد سے بگرام بیس لے جایا جا رہا تھا کہ جلال آبار ایئرپورٹ پر زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے دم توڑ دیا۔ حکام نے ڈاکٹر ٹیٹسو ناکامورا کی ہلاکت پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے صاف پانی کی فراہمی اور زراعت کے شعبے میں ان کی خدمات پر خراج تحسین پیش کیا۔

ننگر ہار کی صوبائی کونسل کے ایک رُکن سہراب قادری کا کہنا ہے کہ حملہ آور فائرنگ کرکے فرار ہوگئے جن کی تلاش میں چھاپہ مار کارروائیاں جاری ہیں، تاحال کسی گروپ نے واقعے کی ذمہ داری قبول نہیں کی ہے۔

News Code 1895930

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 7 + 1 =