امن و سلامتی کا حصول فوجی لشکر کشی کے ذریعہ ممکن نہیں

اسلامی جمہوریہ ایران کے وزیر خارجہ نے اپنے ترک دوستوں کے سامنے بہترین آپشنز پیش کرنے کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ شام پر لشکر کشی سے امن و سلامتی کا حصول ممکن نہیں ہوگا۔

مہر خبررساں ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق اسلامی جمہوریہ ایران کے وزیر خارجہ محمد جواد ظریف نے اپنے ترک دوستوں کے سامنے امن و صلح کے سلسلے میں بہترین آپشنز پیش کرنے کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ شام پر لشکر کشی سے امن و سلامتی کا حصول ممکن نہیں ہوگا۔

محمد جواد ظریف نے کہا کہ اگر چہ ہم امن و سکیورٹی کے سلسلے میں ترکی کے بعض مطالبات کو درک کرتے ہیں لیکن ہم یہ سمجھتے ہیں امن و سلامتی کے حصول کے سلسلے میں فوجی آپشن کو پہلے استعمال نہیں کرنا چاہیے بلکہ امن اور سلامتی کے حصول کے سلسلے میں پہلے مذاکرات اور گفتگو کو موقع فراہم کرنا چاہیے۔ ایرانی وزیر خارجہ نے کہا کہ ہم نے ترک دوستوں کے سامنے اس سلسلے میں بہترین آپشن پیش کئے۔ ایرانی وزیر خآرجہ نے آدانا معاہدے کو ایک آپشن قراردیتے ہوئے کہا کہ آدانا معاہدہ آج بھی معتبرہے اور ہم سرحدی سکیورٹی کو ترک، کرد اور شامی مذاکرات اور گفتگو کے ذریعہ  اورترک حکومت کے تعاون سے شامی فوج کے حوالے کرسکتے ہیں۔ ایرانی وزیر خآرجہ نے شام کے بحران کو حل کرنے کے سلسلے میں کہا کہ شامی، شامی مذاکرات شام کے بحران کا بہترین راہ حل ہے اور ہم یہ تجویز ترکی کے سابق وزیر خارجہ داؤد اوغلو کو بھی دے چکے ہیں۔

News Code 1894496

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 3 + 12 =