ترک وزارت خارجہ میں امریکی سفیر طلب

امریکی سفارتخانہ کی جانب سے ترک حکومت مخالف ٹوئٹ کو لائیک کئے جانے پر ترکی وزارت خارجہ نے انقرہ میں تعینات امریکی سفیر کو طلب کرلیا۔

مہر خبررساں ایجنسی نے آناتولی کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ ترک حکومت کو مطلوب جلاوطن ترک صحافی ارگن باباہن کی 5 اکتوبر کو کی گئی ایک متنازع ٹوئٹ کو امریکی سفارت خانے کے آفیشل ٹویٹر اکاؤنٹ سے لائیک کیا گیا تھا جس پر ترکی وزارت خارجہ نے انقرہ میں تعینات امریکی سفیر جیفری پوونیئر کو طلب کرلیا اور وضاحت مانگی گئی۔ ترکی نے حکومت مخالف ایک ٹویٹ کو لائیک کرنے پر امریکی سفیر کو طلب کرلیا جس پر انہیں معافی بھی مانگنا پڑی۔ امریکی سفارت خانے کے آفیشل ٹویٹر اکاؤنٹ سے غلطی تسلیم کرنے اور معذرت کرنے کے باوجود امریکی سفیر کی ترک وزارتِ خارجہ میں طلبی کے بعد امریکی سفارت خانے کو دوبارہ معافی نامہ بھی جاری کرنا پڑا تھا۔ امریکی وضاحت میں کہا گیا کہ ارگن باباہن سے کوئی تعلق نہیں ہے اور نہ ہی اُن کی ٹوئٹ کے مواد سے متفق ہیں، اپنی غلطی پر افسوس ہے۔ترک صحافی نے اپنی ٹوئٹ میں لکھا تھا کہ " ترکی کے لوگ ایک ایسے سیاسی دور کے لیے تیار ہو جائیں جو ترک نیشنل پارٹی کے رہنما کے بغیر ہوگا" ۔ ترک نیشنل پارٹی صدر اردوغان کی جماعت کیساتھ اقتدار میں شریک بھی ہے۔

واضح رہے کہ ترک حکومت کو مطلوب متنازع ٹویٹ کرنے والے صحافی ارگن باباہن پر 2016 میں ترکی میں ہونے والی ناکام فوجی بغاوت میں سازش کرنے والوں کے ساتھ رابطوں کا الزام ہے فوجی کودتا میں ملوث تمام افراد اس وقت امریکہ میں موجود ہیں ترک صدر اردوغان نے کودتا کے ماسٹر مائنڈ فتح اللہ گولن کو امریہ سے واپس کرنے کی بہت کوشش کی لیکن امیرکہ نے فتح اللہ گولن کو ترکی کے حوالے نہیں کیا۔

News Code 1894375

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 3 + 4 =