پاکستان میں باپ کے سامنے یونیورسٹی جانے والی بیٹی کا بہیمانہ قتل

پاکستان کے شہر کراچی میں وہابی دہشت گردوں نے باپ اور بیٹی کو لوٹنے کے بعد باپ کے سامنے بیٹی کو گولی مار کر قتل کردیا۔

مہر خبررساں نے  جنگ کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ پاکستان کے شہر کراچی میں وہابی دہشت گردوں نے باپ اور بیٹی کو لوٹنے کے بعد باپ کے سامنے بیٹی کو گولی مار کر قتل کردیا۔ اطلاعات کے مطابق گلشن اقبال تھانے کی حدود موچی موڑ کے قریب دوران ڈکیتی مسلح موٹر سائیکل سوار دہشت گردوں کی فائرنگ سے24سالہ مصباح اطہر ولد اطہر زخمی ہو گئی،اسے شدید زخمی حالت میں اسپتال منتقل کیا گیا جہاں دوران علاج اس نے دم توڑ دیا۔ پولیس کے مطابق مصباح اطہر ہمدرد یونیورسٹی میں تھرڈ ائیر کی طالبہ تھی،وہ جمعرات کی صبح7بجکر5منٹ پر اپنے والد کیساتھ گھر سے کار میں بیٹھ کر اسٹاپ پر یونیورسٹی کے پوائنٹ کے انتظار میں تھی کہ اس دوران موٹر سائیکل پر سوار دو مسلح دہشت گردوں نے اسے اور اسکے والد سے لوٹ مار کی اور پھر فائرنگ کردی جس کے نتیجے میں گولی مصباح کی آنکھ کے قریب لگی جسکے نتیجے میں وہ شدید زخمی ہوئی۔مصباح کے چچانے بتایا کہ انکے بھائی اور بھتیجی نے دوران ڈکیتی مزاحمت نہیں کی تھی تاہم پولیس کا کہنا ہے کہ بظاہر ایسا معلوم ہوتا ہے کہ مزاحمت کی گئی ہے،ایس ایس پی ایسٹ غلام اظفر مہیسر کے مطابق جائے وقوعہ سے نائم ایم ایم پستول کا ایک خول ملا ہے جسکی فرانزک کروائی جا رہی ہے. پاکستانی ذرائع کے مطابق وہابی دہشت گرد اپنی مالی کمی کو پورا کرنے کے لئے اب چوری اور ڈکیتی پر اتر آئے ہیں۔

News Code 1894282

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 2 + 4 =