امریکہ کے نزدیک یمنی شہریوں کے قتل عام سے زیادہ سعودی تیل کی اہمیت

اسلامی جمہوریہ ایران کے وزیر خارجہ نے کہا ہے کہ امریکہ کے نزدیک سعودی عرب کے ہوائی حملوں میں یمنی شہریوں کے قتل عام کی کوئی اہمیت نہیں ، امریکہ پر سعودی عرب کے تیل کی عدم سپلائی پر افسردگي طاری ہوگئی ہے۔

مہر خبررساں ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق اسلامی جمہوریہ ایران کے وزیر خارجہ محمد جواد ظریف نے کہا ہے کہ امریکہ کے نزدیک سعودی عرب کے ہوائی حملوں میں یمنی شہریوں کے قتل عام کی کوئی اہمیت نہیں ، امریکہ پر سعودی عرب کے تیل کی عدم سپلائی پر افسردگي طاری ہوگئی ہے۔

ایرانی وزیر خارجہ نے اپنے ٹوئيٹر بیان میں کہا ہے کہ سعودی عرب نے امریکہ کی حمایت سے یمن کے نہتے عربوں کے خلاف گذشتہ پانچ برسوں میں بیشمارجنگی  جرائم کا ارتکاب کیا ۔ یمن کے بنیادی ڈھانچے کو تباہ کردیا ، یمن کے اسکولوں، مساجد، اسپتالوں ، مقدس مقامات اور سیاحتی جگہوں کو اپنی بربریت کا نشانہ بنایا لیکن امریکہ نے کچھ نہیں کہا اورامریکہ نے یمن جنگ کی آڑ میں سعودی عرب کو اربوں ڈالر کے ہتھیار فروخت کئے لیکن امریکہ کے اربوں ڈالر کے ہتھیار سعودی عرب کو یمن کے غیور اور بہادر عوام کی آگ سے محفوظ نہیں رکھ سکے ۔ انھوں نے کہا کہ امریکہ کو یمن کے ہزاروں بچوں ، عورتوں اور مردوں کے قتل عام پر کوئی افسوس نہیں، یمنی عوام نے اپنے دفاع میں کسی سعودی شہری کو قتل نہیں کیا سعودی عرب کے شہروں کو نشانہ نہیں بنایا صرف سعودی عرب کی تیل کی کمپنی آرامکو کے ایک حصہ کو نشانہ بنایا ہے جس میں امریکہ اور اس کے اتحادیوں کي چیخیں نکل گئی ہیں ۔

News Code 1893848

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 1 + 3 =