کشمیریوں کا 21 ستمبر کو سیزفائرلائن توڑنے کا اعلان

پاکستان کے زیر انتظام کشمیر کی مختلف تنظیموں نے 21 ستمبر کو سیزفائرلائن توڑنے کا اعلان کیا ہے۔

مہر خبررساں ایجنسی نے ایکس پریس کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ پاکستان کے زیر انتظام کشمیر کی مختلف تنظیموں نے 21 ستمبر کو سیزفائرلائن توڑنے کا اعلان کیا ہے۔ ان تنظیموں میں انجمن تاجران سمیت سیاسی، سماجی، مذہبی، صحافتی اور سول سوسائٹی کی تنظیمیں شامل ہیں۔ آزاد کشمیرکی ان تنظیموں نے21 ستمبر کو سیزفائرلائن توڑنے کا اعلان کر دیا۔ کانفرنس میں جہلم ویلی سے 20 ہزار نوجوانوں نے شرکت کا عندیہ دیا ہے۔ جہلم ویلی کے تمام پرائیویٹ اسکولوں کے طلبا نے بھی سڑکوں پر آکر کارواں کا استقبال کرنے کا اعلان کیا ہے۔ کوٹلی میں گزشتہ روز ضلعی انتظامیہ نے جموں کشمیر لبریشن فرنٹ کے امن مارچ کو تھلیر کے مقام پر روک لیا ۔ پولیس کے لاٹھی چارج سے متعدد افراد زخمی ہوگئے۔ پولیس نے 10 نامزد سمیت 150 کارکنان کے خلاف مقدمہ درج کرلیا۔ تیتری نوٹ کراسنگ پوائنٹ پر بھی ہزاروں کشمیریوں نے دھرنا دیا، پولیس کے ساتھ جھڑپوں میں لبریشن فرنٹ کے رہنما سردار انور سمیت 15 افراد زخمی ہو گئے۔ انجمن تاجران راولاکوٹ کی اپیل پر راولاکوٹ شہر میں سیز فائر لائن کی طرف آزاد ی مارچ کرنے والے قافلے کو الوداع کہنے کیلیے رضا کارانہ شٹر ڈاؤن اور تعلیمی اداروں کو بند کر دیا گیاتھا۔

News Code 1893612

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 7 + 2 =