کشمیر میں ہزاروں کشمیریوں نے کرفیوں توڑ کراحتجاجی مظاہرہ کیا

کشمیر کے دارالحکومت سرینگر کے علاقے صورہ میں نماز جمعہ کے بعد ہزاروں کشمیریوں نے کرفیو کی پابندیوں کوتوڑ کر سڑکوں پر بھارتی حکومت کے خلاف احتجاج کیا اور آزادی کے حق میں نعرے لگائے۔

مہر خبررساں ایجنسی نے بی بی سی کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ کشمیر کے دارالحکومت سرینگر کے علاقے صورہ میں نماز جمعہ کے بعد ہزاروں کشمیریوں نے کرفیو کی پابندیوں کوتوڑ کر سڑکوں پر بھارتی حکومت کے خلاف احتجاج کیا اور آزادی کے حق میں نعرے لگائے۔

اطلاعات کے مطابق صورہ میں جمعہ کی دوپہر ایک بجے سے لوگ مرکزی درگاہ پر نماز جمعہ کے لیے جمع ہونا شروع ہوگئے جن میں خواتین شامل تھیں۔ نماز جمعہ کے بعد مظاہرے میں شریک سیکڑوں افراد نے کشمیر کی آزادی کے حق میں نعرے بازی کی اور پرامن مظاہرہ کیا جس پر بھارتی فوج نے مظاہرین پر دھاوا بول دیا اور پیلٹ گن و آنسو گیس کے شیل فائر کئے جبکہ مظاہرین پتھراؤ کرتے رہے۔

پیلٹ گن کی فائرنگ سے کئی افراد زخمی ہوگئے، جھڑپیں 2 گھنٹے تک جاری رہیں، مقامی افراد نے مرکزی بازار میں رکاوٹیں کھڑی کردیں، بھارتی فورسز نے بھی جگہ جگہ ناکہ بندی کررکھی تھی، اقوام متحدہ کے دفتر کی جانب احتجاجی مارچ کی کال کے پیشِ نظر اس طرف جانے والے تمام راستوں کو بند کردیا گیا تھا۔ سرینگر کی مرکزی جامع مسجد درگاہ حضرت بلؒ میں نماز جمعہ کے بڑے اجتماع کی اجازت نہیں دی گئی۔ صرف مقامی افراد کو نماز پڑھنے کی اجازت دی گئی۔ واضح رہے کہ کشمیر میں گذشتہ تین ہفتوں سے صورتحال کافی کشیدہ ہے۔ بھارتی حکومت نے کشمیر کو فوجی چھاؤنی میں تبدیل کردیا ہے۔

News Code 1893180

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 8 + 9 =