افغانستان میں سرگرم طالبان دہشت گرد رہنماؤں کو پاکستانی دعوت کا انتظار

افغانستان میں سرگرم طالبان دہشت گرد رہنماؤں نے کہا ہے کہ اگر پاکستانی حکومت انھیں دورے کی دعوت دے گی تو وہ پاکستان کی دعوت قبول کریں گے۔

مہر خبررساں ایجنسی نے ایکس پریس کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ افغانستان میں سرگرم طالبان دہشت گردوں نے کہا ہے کہ اگر پاکستانی حکومت انھیں دورے کی دعوت دے گی تو وہ پاکستان کی دعوت قبول کریں گے۔ قطر کے دارالحکومت دوحہ میں طالبان کے سیاسی دفتر کے ترجمان سہیل شاہین نے کہا کہ اگر انھیں پاکستان نے دورے کی باضابطہ دعوت دی تو قبول کریں گے، ہم تو خطے اور پڑوسی ممالک کے دورے کرتے رہتے ہیں، پاکستان بھی جائیں گے جو ہمارا ہمسایہ اور مسلمان ملک ہے۔

پاکستان کے آلہ کار ہونے سے متعلق الزام کے جواب میں سہیل شاہین نے کہا کہ جن لوگوں کے پاس طالبان کے خلاف جھگڑے کے لیے کوئی اور دلیل نہیں وہی ہم پر ایسے الزامات لگاتے ہیں، ہمارے اسلامی اور قومی مفاد ہیں جس میں ہم کسی کو بھی مداخلت نہیں کرنے دیتے، جہاں تک دوسرے ممالک اور ہمسایہ ممالک کے ساتھ رابطے قائم کرنے کا سلسلہ ہے، اُن کے ساتھ تو ہمارے رابطے ہیں بھی اور ہم چاہتے بھی ہیں۔

واضح رہے کہ پاکستان کے وزیراعظم عمران خان نے امریکہ کے حالیہ دورے میں کہا تھا کہ پاکستان واپس جاکر طالبان سے ملیں گے اور انہیں افغان حکومت کے ساتھ مذاکرات پرآمادہ کریں گے۔

News Code 1892438

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 4 + 1 =