ایرانی وزیر خارجہ کا ٹوکیو میں امریکی صدر کے بیان پر رد عمل

اسلامی جمہوریہ ایران کے وزیر خارجہ نے ٹوکیو میں امریکی صدر ٹرمپ کی طرف سے ایران کے ساتھ مذاکرات کے بارے میں بیان پر رد عمل ظاہر کرتے ہوئے کہا ہے کہ امریکی صدر کی گفتگو سے نہیں بلکہ اس کے عمل سے پتہ چلےگا کہ وہ کیا چاہتے ہیں۔!

مہر خبررساں ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق اسلامی جمہوریہ ایران کے وزیر خارجہ محمد جواد ظریف نے سوشل میڈیا پر اپنے بیان میں جاپان کے دارالحکومت ٹوکیو میں امریکی صدر ٹرمپ کی طرف سے ایران کے ساتھ مذاکرات کے بارے میں بیان پر رد عمل ظاہر کرتے ہوئے کہا ہے کہ دیکھنا ہوگا کہ امریکی صدر کی گفتگو اس کے عمل کے مطابق ہے یا نہیں۔! ایرانی وزیر خارجہ نے کہا کہ ایران کے روحانی پیشوا حضرت آیت اللہ العظمی خامنہ ای نے بہت پہلے ایٹمی ہتھیاروں کی ممنوعیت کے بارے میں فتوی صادر کرتے ہوئے کہا تھا کہ ایران ایٹمی ہتھیاروں کی تلاش میں نہیں۔  جواد ظریف نے کہا کہ امریکہ کا " بی گروپ "  ایران کی معیشت اور اقتصاد کو نقصان پہنچانے اور خطے میں کشیدگی اور عدم استحکام پیدا کرنے کی کوشش کررہا ہے ۔ جواد ظریف نے کہا کہ  ٹرمپ کی گفتگو سے نہیں بلکہ  عمل سے پتہ چلے گا کہ وہ کیا چاہتے ہیں۔ !

News Code 1890888

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 3 + 0 =