پاکستان کے علاقہ سکھر میں جرگہ نے 2 لڑکیوں کو کاری قراردیدیا

پاکستان کےصوبہ سندھ کے علاقہ سکھر میں جرگے نے 2 لڑکیوں کو کاری قرار دے کر 2 نوجوانوں پر 8،8 لاکھہ روپے جرمانہ اور گاؤں بدر کرنے کا فیصلہ سنایا ہے۔

مہر خبررساں ایجنسی نے پاکستانی ذرائع کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ پاکستان کےصوبہ سندھ کے علاقہ سکھر میں جرگے نے 2 لڑکیوں کو کاری قرار دے کر 2 نوجوانوں پر 8،8 لاکھہ روپے جرمانہ اور گاؤں بدر کرنے کا فیصلہ سنایا ہے۔جبکہ پولیس نے لڑکیوں اور نوجوانوں کو حفاظتی تحویل میں لے لیا ہے۔ اطلاعات کے مطابق گذشتہ روز سکھر کے علاقے بندر روڈ کے نزدیک میر سلیم کھوسو کی سرپنچی میں 2 غیر شادی شدہ لڑکیوں رخسانہ کو عبدالحکیم مرھٹو کے ساتھ سیاہ کاری کا الزام دوسری شازیہ کو نوید سندرانی کے ساتھ سیاہ کاری کا الزام دے کر عبدالحکیم مرھٹو اور نوید سندرانی پر 8،8لاکھ روپے جرمانہ اور نوجوانوں کو گاؤں بدر کرنے کا فیصلہ سنایا گیا، نوجوانوں کے ورثا نے جرگے کا فیصلہ تسلیم کرتے ہوئے 50،50 ہزار روپے موقع پر ادا کیے۔ واضح رہے کہ سندھ ہائی کورٹ کی جانب سے سندھ میں جر گوں پر پابندی عائد کی گئی ہے۔اس حکم کے باجود جرگہ کیا گیا، ایس ایس پی عرفان علی سموں نے رابطہ کرنے پر بتایا کہ اس اطلاع پر پولیس نے تفتیش کی ہے، سکھر میں ایسا کوئی جرگہ نہیں ہوا اس کے باوجود سکھر پولیس نے جیکب آباد میں کارروائی کر کے دونوں لڑکیوں اور لڑکوں کواپنی حفاظتی تحویل میں لے لیا ہے، لڑکیوں کو وومین پولیس کے حوالے کیا گیا ہے جبکہ جرگے کے سرپنچ کی گرفتاری کے لیے چھاپے مارے جا رہے ہیں اور جرگے کے متعلق تفتیش کی جارہی ہے۔

News Code 1890665

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 7 + 11 =