ایرانی تیل کے حصص کو خریدنے کے 6 آسان طریقے/ ایرانی تیل کی کم قیمت اور آسان خرید

ایرانی تیل کی مارکیٹ سےآسانی کے ساتھ تیل حصص خریدنے کے 6 اہم اور ٹھوس دلائل موجود ہیں جن میں خریداروں کی اطلاعات کو مخفی رکھنا، تیل کی کم قیمت میں فروخت، ریال میں تسویہ حساب، مقصد کا آزاد ہونا، تیل کی ترسیل کے چھوٹے گیلن اور تیل کے حصص میں باآسانی شراکت شامل ہیں۔

مہر خبررساں ایجنسی کے نامہ نگار کی رپورٹ کے مطابق ایرانی تیل کی مارکیٹ سےآسانی کے ساتھ  تیل حصص خریدنے کے 6 اہم اور ٹھوس دلائل موجود ہیں جن میں خریداروں کی اطلاعات کو مخفی رکھنا، تیل کی کم قیمت میں فروخت، ریال میں تسویہ حساب، مقصد کا آزاد ہونا، تیل کی ترسیل کے چھوٹے گیلن  اور تیل کے حصص میں باآسانی شراکت شامل ہیں۔

ایران نے  اکتوبر 2018 میں ایران کے تیل اور انرجی اسٹاک ایکسچينج میں سرکاری طور پر تیل کی فروخت کا آغاز کیا اور ایک ملین بیرل تیل ایران کی انرجی منڈی میں فروخت کے لئے پیش کیا گیا، 1398 شمسی کے بجٹ کی منظوری کے بعد ایران کی انرجی منڈی میں 6 ملین بیرل ماہانہ تیل فروخت کے لئے پیش کیا جائےگا ۔ ایران کے تیل کو خریدنے کے لئے 6 آسان اور ٹھوس دلائل موجود ہیں ۔

1 : ایرانی تیل کے خریداروں کی اطلاعات کو مخفی رکھا جائےگا اس نئی روش میں خریدار صرف مخصوص کوڈ کے ذریعہ آسانی کے ساتھ تیل خرید سکے گا۔

2: ایران کے تیل کی منڈی میں عالمی منڈی کی نسبت کم قیمت پر تیل فروخت کیا جاتا ہےجس سے خریدار کو بہت زیادہ فائدہ پہنچ سکتا ہے۔

3 : نئی اور جدید روش میں ایرانی تیل کی مارکیٹ سے ایرانی تیل کے مبلغ کو ایرانی ریال میں  تسویہ حساب کو بھی مدنظر رکھا گیا ہے غیر ملکی خریدار اور سرمایہ کار ایران کے نجی شعبہ اور ایرانی تاجروں  کے ذریعہ تیل خرید سکتے ہیں اور انھیں ملک کے اندر ریال میں تیل کا مبلغ ادا کرسکتے ہیں اور اس طرح وہ پابندیوں سے محفوظ بھی رہ سکتے ہیں۔

4 : ایرانی تیل کی منڈی سے خریدا ہوا تیل اسرائیل کے علاوہ کسی بھی جگہ لے جایا جاسکتا ہے لہذا خریدار تیل کے مقصد میں آزاد ہے۔

5 : ایرانی تیل کی منڈی سے تیل خریدنے کا ایک امتیاز یہ بھی ہے کہ تیل چھوٹے چھوٹے گیلنوں میں فروخت کیا جاتا ہے جنھیں آسانی کے ساتھ ادھر ادھر منتقل کیا جاسکتا ہے۔

6 : ایرانی تیل کی منڈی میں تیل کے حصص میں آسان شراکت کو بھی مد نظر رکھا گیا جبکہ یہ امتیاز سرکاری طور پر فروخت کئے جانے والے ایرانی تیل میں موجود نہیں ہے۔

News Code 1889941

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 1 + 4 =