پیرس میں 800 سال قدیم نوٹر ڈیم چرچ میں خوفناک آگ لگ گئی

فرانس کے دارالحکومت پیرس کے 800 سال قدیم نوٹر ڈیم چرچ میں خوفناک آگ لگ گغی جس کے نتیجے میں عمارت مکمل تباہ ہو گئی ہے۔

مہر خبررساں ایجنسی نے فرانسیسی خبررساں ایجنسی کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ فرانس کے دارالحکومت پیرس کے 800 سال قدیم نوٹر ڈیم چرچ میں خوفناک آگ لگ گغی جس کے نتیجے میں عمارت مکمل تباہ ہو گئی ہے۔

اطلاعات کے مطابق فرانس کے شہر پیرس کے 800 سال قدیم نوٹر ڈیم چرچ میں خوفناک آتشزدگی کے باعث عمارت مکمل طور پر تباہ ہو گئی۔ آتشزدگی کی وجہ سے گرجا گھر کی چھت اور مخروطی چوٹی گر گئی ہے۔ 

حکام کا کہنا ہے کہ چرچ میں سالانہ مرمت و آرائش کا کام جاری تھا کہ اچانک بھڑک اٹھی اور دیکھتے ہی دیکھتے آگ نے پوری عمارت کو اپنی لپیٹ میں لے لیا، فائر فائٹرز کی کئی گھنٹوں کی کوششوں کے بعد بھی آگ پر قابو نہ پایا جا سکا جس کی وجہ سے گرجا گھر کی عمارت مکمل طور پر تباہ ہو گئی تاہم آگ لگنے کا سبب معلوم نہ ہو سکا۔

ادھر فرانسی صدر ایمانول میکرون نے نوٹر ڈیم کلیسا میں آتشزدگی کے بعد اس کی تعمیر نو کا اعلان کردیا ہے۔پیرس کے اس تاریخی نوٹر ڈیم چرچ کی تعمیر 1160 میں شروع اور 1260 میں مکمل ہوئی، اس کی تعمیر میں 550 ٹن لکڑی اور 250 ٹن سیسہ استعمال کیا گیا۔ تاریخی نوٹر ڈیم کلیسا کی بلندی 305 فٹ ہے جب کہ نوٹر ڈیم کلیسا کا مخروطہ 1850 میں گرا کر نیا بنایا گیا تھا۔

News Code 1889737

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 5 + 8 =