پورا ایران سپاہی ہے/ ٹرمپ نے ابھی سپاہ پاسداران انقلاب اسلامی کو پہچانا نہیں

اسلامی جمہوریہ ایران کے دارالحکومت تہران میں نماز جمعہ کے عارضی خطیب نے سپاہ پاسداران انقلاب اسلامی کے خلاف امریکہ کے اقدام کو بہت ہی مضحکہ خیزقراردیتے ہوئے کہا ہے کہ دنیا جانتی ہے کہ امریکہ دہشت گردوں کا اصلی حامی ہے جبکہ سپاہ پاسداران انقلاب اسلامی نے عراق اور شام میں امریکہ کے پروردہ دہشت گردوں کو شکست سے دوچار کیا ہے۔

مہر خبررساں ایجنسی کے نامہ نگار کی رپورٹ کے مطابق اسلامی جمہوریہ ایران کے دارالحکومت تہران میں نماز جمعہ آیت اللہ موحدی کرمانی کی امامت میں منعقد ہوئی، جس میں لاکھوں مؤمنین نے شرکت کی۔ خطیب جمعہ نے سپاہ پاسداران انقلاب اسلامی کے خلاف امریکہ کے اقدام کو بہت ہی مضحکہ خیزقراردیتے ہوئے کہا ہے کہ دنیا جانتی ہے کہ  امریکہ دہشت گردوں کا اصلی حامی ہے جبکہ سپاہ پاسداران انقلاب اسلامی نے عراق اور شام میں امریکہ کے پروردہ دہشت گردوں کو شکست سے دوچار کیا ہے۔

آیت اللہ موحدی کرمانی نے کہا کہ امریکہ نے اپنے اس اقدام کے ذریعہ ثابت کردیا ہے کہ وہ بین الاقوامی قوانین کو پامال کرنے اور دوسرے ممالک کے سول اور فوجی اداروں کو احمقانہ اور یکطرفہ پالیسیوں کا نشانہ بنانے پر کمر بستہ ہے۔ انھوں نے کہا کہ امریکہ نے ایرانی سپاہ کو دہشت گرد قراردیکر اپنے فوجیوں کی جان خطرے میں ڈال دی ہے کیونکہ ایران بھی اب امریکی فوجیوں کے ساتھ  ویسا ہی سلوک کرےگا جیسا امریکہ نے سپاہ کے ساتھ کیا ہے۔

آیت اللہ موحدی کرمانی نے کہا کہ آج دنیا کا ہر انسان جانتا ہے کہ امریکہ ام الفساد اور دہشت گردی کی اصلی جڑ ہے اور امریکہ کے موجودہ صدر ٹرمپ خود متعدد بار اس بات کا اعتراف کرچکے ہیں کہ امریکہ نے القاعدہ، طالبان اور داعش کو تشکیل دیا اور امریکہ نے دہشت گرد گروہوں کی تشکیل میں اہم کردار ادا ہے۔

انھوں نے کہا کہ امریکہ خود بھی دہشت گرد ہے اور دہشت گردوں کا اصلی حامی بھی ہے اور یہی وجہ ہے کہ ایران نے امریکی فوج کی مرکزی کمانڈ سینٹکام  اور اس سے وابستہ امریکی اہلکاروں کو دہشت گرد قراردے دیا ہے۔

آیت اللہ موحدی کرمانی نے کہا کہ امریکہ دہشت گردوں کی ماں ہے اور مشرق وسطی میں امریکی فوج دہشت گردوں کی آشکارا پشتپناہی کررہی ہے۔

تہران کے عارضی امام جمعہ نے ایرانی عوام پر زوردیا کہ وہ سیلاب سے متاثرہ علاقوں کےافراد کی بھر پور طریقہ سے مدد کریں اور اللہ تعالی کی خوشنودی حاصل کریں۔۔

News Code 1889643

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 2 + 14 =