پانامہ اسکینڈل منظر عام پر آنے کے بعد ایک ارب ڈالر سے زائد ٹیکس و جرمانہ وصول کیا گیا

پانامہ پیپرز اسکینڈل منظر عام پر آنے کے بعد سے اب تک 22 ممالک کی حکومتوں نے اس اسکینڈل میں نامزد سیاست دانوں اور کاروباری شخصیات سمیت متعدد افراد سے ٹیکس اور جرمانے کی مد میں مجموعی طور پر ایک ارب 20 کروڑ ڈالر وصول کرلیے۔

مہر خبررساں ایجنسی نے ذرائع کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ پانامہ پیپرز اسکینڈل منظر عام پر آنے کے بعد سے اب تک 22 ممالک کی حکومتوں نے اس اسکینڈل میں نامزد سیاست دانوں اور کاروباری شخصیات سمیت متعدد افراد سے ٹیکس اور جرمانے کی مد میں مجموعی طور پر ایک ارب 20 کروڑ ڈالر وصول کرلیے۔ انٹرنیشنل کنسورشیئم آف انوسٹیگیٹو جرنلسٹس (آئی سی آئی جے) نے اپنی ویب سائٹ پر بتایا کہ برطانیہ نے اسکینڈل کے بعد 25 کروڑ 30 لاکھ ڈالر، فرانس نے 13 کروڑ 60 لاکھ ڈالر، آسٹریلیا نے 9 کروڑ 30 لاکھ ڈالر ٹیکس و جرمانے کی مد میں وصول کیے۔ پانامہ لیکس سے متعلق تحقیقات کرنے والے جرمن اخبار نے اپنی ایک رپورٹ نے بتایا کہ جرمنی ٹیکس و جرمانے کی مد میں اب تک 18 کروڑ 30 لاکھ ڈالر وصول کر لیے ہیں۔

خیال رہے کہ پانامہ پیپرز لیکس منظر عام پر آنے کے بعد دنیا کے مختلف ممالک کے ٹیکسیشن ادارے منظم انداز میں ہونے والی اس ٹیکس چوری کے خلاف کارروائی کرنے کے لیے متحرک ہوگئے تھے۔ دنیا کے 100 سے زائد میڈیا اداروں نے اس تحقیقات میں حصہ لیا جس میں 140 ٹیکس نادہندہ گان سیاست دان، فٹبال اسٹارز اور عرب پتی شخصیات شامل تھیں۔

News Code 1889426

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 4 + 1 =