کشمیر میں تعلیم یافتہ نوجوان بھی مزاحمت میں شامل

امریکی اخبار واشنگٹن پوسٹ نے انکشاف کیا ہے کہ ہندوستان کے زیر انتظام کشمیر میں کشمیر کے تعلیم یافتہ نوجوان بھی بھارتی فوج کے خلاف مزاحمتی تحریک میں شامل ہو رہے ہیں۔

مہر خبررساں ایجنسی نے امریکی اخبار واشنگٹن پوسٹ کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ ہندوستان کے زیر انتظام کشمیر میں کشمیر کے تعلیم یافتہ نوجوان بھی بھارتی فوج کے خلاف مزاحمتی تحریک میں شامل ہو رہے ہیں۔ اطلاعات کے مطابق کشمیر کے اساتذہ اور پڑھا لکھا طبقہ بھی تحریک آزادی کا حصہ بن رہا ہے  اور بھارت کیخلاف اٹھ کھڑا ہوا ہے۔واشنگٹن پوسٹ کے صحافیوں نے کشمیر کا رخ کیا اور وہاں کی صورتحال کا جائزہ لیا لیکن صرف سرینگر تک محدود رہنے اور بھارت مخالف افراد سے نہ ملنے کی شرط پر اجازت ملی۔ واشنگٹن پوسٹ کی خصوصی رپورٹ کے مطابق بھارتی فورسز کا تضحیک آمیز رویہ، انتہائی تعلیم یافتہ کشمیریوں کو تحریک آزادی کا حصہ بننے پر مجبور کردیا ہے ۔کشمیری نوجوانوں کی بڑی تعداد نے مزاحمت کا راستہ اختیار کیا ہے۔ ذرائع کے مطابق پاکستان چاہتا ہے کہ کشمیری قربانی دیکر کشمیر کو پاکستان کے ساتھ ملحق کریں، جبکہ پاکستان نے عالمی سطح پر کشمیر کے حوالے سے کوئی ٹھوس قدم نہیں اٹھایا ، حتی کشمیر کے حوالے سے اقوام متحدہ کی فرسودہ قرارداد کو دوبارہ احیا کرنے کے سلسلے میں بھی پاکستان نے کچھ نہیں کیا ، باخبر ذرائع کے مطابق پاکستان صرف یہ چاہتا ہے کہ کشمیری قربانی دیتے رہیں اور وہ کشمیر کے نام پر اسلامی ممالک سے صرف چندہ وصول کرتا رہے ۔ ذرائع کے مطابق پاکستان نے کشمیر کو اپنی روزی روٹی کا مسئلہ بنا رکھا ہے۔ پاکستان خود کشمیر کے لئے کوئی قربانی پیش کرنے کے لئے تیار نہیں۔

News Code 1889255

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 1 + 1 =