سعودی عرب کا خطے میں اعتبار اور نفوذ بہت کم ہوگیا

امریکی یونیورسٹی جارج ٹاؤن کی پروفیسر شیریں ہینٹر کا کہنا ہے کہ جمال خاشقجی کے بہیمانہ قتل کے بعد خطے میں سعودی عرب کا اعتبار اور نفوذ بہت کم ہوگیا ہے۔

مہر خبررساں ایجنسی کے بین الاقوامی امور کے نامہ نگار کے ساتھ گفتگو میں امریکی یونیورسٹی جارج ٹاؤن کی پروفیسر شیریں ہینٹر کا کہنا ہے کہ جمال خاشقجی کے بہیمانہ قتل کے بعد خطے میں سعودی عرب کا اعتبار اور نفوذ بہت کم ہوگیا ہے۔امریکی  یونیورسٹی کی پروفیسر کا کہنا ہے سعودی صحافی جمال خاشقجی کا قتل مشرق وسطی میں اس کے لئے اہم حادثہ تھا اور جمال خاشقجی کے بہیمانہ قتل کے بعد سعودی عرب کے حکام خاص طور پر سعودی عرب کے ولیعہد کا مکروہ چہرہ دنیا کے سامنے نمایاں ہوگيا۔ اور خطے میں سعودی عرب کا نفوذ بھی بہت کم رہ گیا ہے ۔ جارج ٹاؤن یونیورسٹی کی پروفیسر نے مہر نیوز کے صحافی سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ مغربی ممالک کی طرف سے سعودی عرب کی حمایت خود مغربی ممالک کے لئے مصیبت بن رہی ہے مغربی ممالک خود سعودی عرب کی وجہ سے بدنام ہورہے ہیں کیونکہ مغربی ممالک کودو میں سے ایک کام کرنا پڑےگا  یاانھیں  انسانی حقوق اور جمہوریت کی حمایت کرنی پڑےگی  یا پھر سعودی عرب کے ڈکٹیٹر نظام کی حمایت جاری رکھنی پڑےگی اس نے کہا کہ مغربی ممالک کو اب سعودی عرب کے ساتھ تعلقات کو محدود رکھنا پڑےگا۔

News Code 1888901

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 4 + 3 =