بھارت سارک سربراہی اجلاس منعقد کروانے دے، نپال

نیپال نے ساؤتھ ایشین ایسوسی ایشن ریجنل کووآپریشن (سارک) کے اجلاس کے انعقاد پر زور دیتے ہوئے کہا ہے کہ اختلافات کو بات چیت کے ذریعے حل کیا جانا چاہیے۔

مہر خبررساں ایجنسی نے بھارتی ذرائع کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ نیپال نے ساؤتھ ایشین ایسوسی ایشن ریجنل کووآپریشن (سارک) کے اجلاس کے انعقاد پر زور دیتے ہوئے کہا ہے کہ اختلافات کو بات چیت کے ذریعے حل کیا جانا چاہیے۔

نیپالی وزیر خارجہ پردیپ کمار گیاوالی نے گزشتہ برس امریکی صدر ڈونلڈٹرمپ اور شمالی کوریا کے سپریم لیڈر کم جانگ ان کے درمیان سنگاپور میں ہونے والی تاریخی ملاقات کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ صرف مذاکرات ہی وہ واحد طریقہ ہے جس کے ذریعے اختلافات دور کیے جاسکتے ہیں۔

صحافیوں اور امورِ خارجہ کے ماہرین سے ملاقات کرتے ہوئے ان کا مزید کہنا تھا کہ اگر صدر ٹرمپ اور شمالی کوریا کے کم جونگ ملاقات کر سکتے ہیں تو دیگر ممالک کے رہنما کیوں نہیں ملِ سکتے؟

نیپالی وزیر خارجہ نے ایک روز قبل بھارتی وزیر خارجہ سشماسوراج سے بھی ملاقات کی تھی جس کے بارے میں انہوں نے بتایا کہ نیپال نے سارک سربراہی اجلاس کا معاملہ بھارت کے سامنے اٹھایا ہے، انہوں نے امید ظاہر کی کہ اجلاس کا انعقاد جلد ہوگا۔

خیال رہے کہ 2016 میں سارک اجلاس اسلام آباد میں ہونے والا تھا لیکن بھارت نے جموں کشمیر میں فوجی کیمپ پر ہونے والے ہولناک حملے کو جواز بنا کر شرکت سے انکار کردیا۔ بعدازاں بنگلہ دیش، بھوٹان، اور افغانستان نے بھی اجلاس میں شرکت سے انکار کردیا جس کے باعث اجلاس منسوخ کردیا گیا، واضح رہے کہ مالدیپ اور سری لنکا اس تنظیم کے ساتویں اور آٹھویں اراکین ہیں۔

News Code 1887232

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 4 + 7 =