غزہ پر اسرائیل کے تباہ کن حملوں میں اب تک 136 فلسطینی شہید

مہر نیوز/ 21 نومبر/ 2012ء:غزہ پر اسرائیل کے تباہ کن حملوں میں شہید ہونے والے فلسطینیوں کی تعداد 136 ہوگئی ہے، ان میں 31 سے زیادہ بچے ہیں۔

مہر خبررساں ایجنسی نے عرب ذرائع کے حوالے سے نقل کیا ہے کہغزہ پر اسرائیل کے تباہ کن حملوں میں شہید ہونے والے فلسطینیوں کی تعداد 136 ہوگئی ہے، ان میں 31 سے زیادہ بچے ہیں۔اطلاعات کے مطابق منگل کو اسرائیلی فضائی حملوں میں 20 مزید فلسطینی شہید ہوگئے جب کہ غزہ سے داغے گئے راکٹ حملوں سے ایک اسرائیلی فوجی اور ایک شہری ہلاک ہو گیا۔ حماس کے راکٹ حملوں میں اب تک ایک فوجی سمیت 5 اسرائیلی ہلاک ہوچکے ہیں۔ فریقین کے درمیان جنگ بندی کا معاہدہ بھی طے نہیں پاسکا۔ تباہی پھیلانے اور مذموم مقاصد حاصل کرنے کے لئے جنگ بندی کی کوششوں کو بھی نظر انداز کیا جا رہا ہے یہی وجہ ہے کہ معاہدے کے قریب پہنچ کر بھی جنگ بندی نہ ہوسکی۔ حماس کے عہدیداروں کے مطابق مصر میں ہونے والے مذاکرات میں پیش کی گئی تجاویز کا اسرائیل نے کوئی جواب نہیں دیا۔ اس لئے جنگ بندی کے معاہدے پر دست خط نہ ہوسکے۔ فلسطینیوں کی حالت زار سے دنیا کو باخبر کرنے والا میڈیا بھی اسرائیلی جنون سے محفوظ نہیں۔ غزہ میں ایک عمارت کو نشانہ بنایا گیا جہاں غیر ملکی میڈیا کے دفاتر ہیں۔ تین دن میں میڈیا کے دفاتر پر یہ تیسرا حملہ ہے۔غزہ پر حملے شروع ہونے کے ایک ہفتے بعد بالآخر امریکی وزیر خارجہ امن مشن پر مقبوضہ بیت المقدس پہنچ گئیں۔ لیکن یہاں آتے ہی انہوں نے سب سے پہلے اسرائیل کی کھلی حمایت کا اعلان کیا۔ اسرائیلی وزیر اعظم کے ساتھ پریس کانفرنس میں ہیلری کلنٹن کا کہنا تھا کہ اسرائیل کو اپنے دفاع کا حق ہے۔ امریکا اسرائیل کی سلامتی کو مقدم سمجھتا ہے۔ ہیلری کلنٹن نے یہ اشارہ بھی دیا کہ جنگ بندی اس وقت تک نہیں ہوگی جب تک وہ مغربی کنارے میں فلسطینی صدر اور قاہرہ میں مصری صدر سے ملاقات نہیں کرلیتیں۔امریکی وزیر خارجہ کے برعکس ترک وزیر اعظم رجب طیب اردوغان کا کہنا ہے کہ فضائی حملوں کو دفاع نہیں کہا جاسکتا۔

News Code 1749634

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 8 + 0 =