ہندوستان میں بدعنوانی پر قابو پانے کے لئے لوک پال کمیٹی کا اجلاس مثبت رہا

ہندوستان میں بد عنوانی پر قابو پانے کے لیے لوک پال بل کے لیے جو کمیٹی تشکیل دی گئی تھی اس کا پہلا اجلاس مثبت رہاہے۔

مہر خبررساں ایجنسی نے ہندوستانی ذرائع کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ ہندوستان میں بد عنوانی پر قابو پانے کے لیے لوک پال بل کے لیے جو کمیٹی تشکیل دی گئی تھی اس کے پہلے اجلاس  میں سبھی افراد نے شرکت کی ہے اور یہ اجلاس مثبت رہاہے۔اجلاسکے بعد مرکزی وزیر کپل سبّل نے میڈیا سے بات چیت میں کہا ہے کہ سبھی افراد اس بات سے متفق تھے کہ کرپشن سے چھٹکارا پانےکے لیے ایک مضبوط اور موثر طریقہ کار کی ضرورت ہے۔کپل سبل نے کہا کہ کمیٹی نے یہ بات محسوس کی ہے کہ بل تیار کرنے سے پہلے کمیٹی اس مسئلے پر عوام کے سبھی طبقوں سے صلاح و مشورہ بھی کرے۔ ’ ہم نے اس بات پر اتفاق کیا ہے کہ ایک مضبوط اور کارگر لوک پال بل تیار کیا جائے اور اسے آئندہ مانسون کے پارلیمانی اجلاس میں پیش کیا جانا چاہیے۔سبّل نے کہا کہ یہ ایک تاریخی قدم ہے اور جلد ہی میٹنگ کر کے ایک اچھا بل تیار کیا جائیگا۔دس افراد پر مشتمل اس کمیٹی میں پانچ افراد سول سوسائٹی کے ہیں اس دس رکنی کمیٹی میں وزیرخزانہ پرنب مکھرجی، انسانی وسائل کے وزیر کپل سبّل، وزیر داخلہ پی چدامبرم، وزیر قانون وی رپّا موئیلی اور سلمان خورشید حکومت کی نمائندگی کر رہے ہیں۔ گذشتہ چند مہینوں میں سرکاری اداروں میں اربوں روپے کی بد عنوانی کے کئی معاملات سامنے آئے ہیں۔ اور اس پر قابو پانے کے لیے ہندوستان میں کوئی مؤثر طریقۂ کار نہیں ہے۔ماہرین کے مطابق لوک پال بل میں ایسی شقیں شامل کی جائیں گی جس کہ بدعنوانی کی تفتیش کرنے والے ادارے حکومت یا سیاسی جماعتوں سے کے دباؤ سے الگ رہیں اور آسانی کے ساتھ ایسے افراد پر مقدمہ چلایا جا سکے.

News Code 1290355

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 2 + 1 =