اسامہ بن لادن اور بش کے قریبی روابط// عمربن لادن کووہائٹ ہاؤس کی دعوت

القاعدہ دہشت گرد تنظیم کے سربراہ اسامہ بن لادن کے چھوٹے بیٹے عمر بن لادن نے اسامہ بن لادن اور سابق امریکی صدر جارج بش کے قریبی روابط سے پردہ اٹھاتے ہوئے کہا ہے کہ القاعدہ کے رہنما بن لادن کے امریکی صدر سے قریبی روابط رہے ہیں اور اس نے وہائٹ ہاؤس کا دورہ بھی کیا ہے۔

مہر خبررساں ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق القاعدہ دہشت گرد تنظیم کے سربراہ اسامہ بن لادن کے چھوٹے بیٹے عمر بن لادن نے اخبار ڈیلی ٹیلیگراف سے گفتگو میں اسامہ بن لادن اور سابق امریکی صدر جارج بش کے قریبی روابط سے پردہ اٹھاتے ہوئے کہا ہے کہ القاعدہ کے رہنما بن لادن کے امریکی صدر سے قریبی روابط رہے ہیں اور اس نے وہائٹ ہاؤس کا دورہ بھی کیا ہے۔عمر بن لادن نے کہا کہ امریکی صدر جارج بش نے اپنی صدارت کے آخری ایام میں مجھے وہائٹ ہاؤس کا دورہ کرنے کی دعوت دی اور اس دعوت کا مقصد میرے باپ کی خفیہ جگہ کے بارے میں معلومات حاصل کرنا تھا عمر بن لادن نے کہا کہ 2008 ء کے اواخر یا جنوری 2009 میں وہائٹ ہاؤس کی طرف سے مجھے قطر میں ایک دعوتنامہ ملا جس میں مجھے امریکہ کی دعوت دی گئی تھی۔ عمر بن لادن نےکہا کہ مجھے اپنے باپ کے بارے میں 11 ستمبر کے حملوں کے بعد سے کوئی اطلاع نہیں ہے اور اسامہ بن لادن میرا باپ ہے اور باپ کی خفیہ جگہ مجھے بھی معلوم نہیں لہذا میں نے امریکیوں سے اس سلسلے میں معذرت طلب کرلی۔

 

اطلاعات کے مطابق بش ایک تیل کی کمپنی کے مالک ہیں اور اسامہ بن لادن بھی سعودی عرب میں متمول وہابی خاندان سےہیں جس کی وجہ سے اسامہ بن لادن اور امریکہ کے سابق صدر جارج بش کے درمیان قریبی روابط تھے  امریکی اخبـار نیویارک ٹائمز کی رپورٹ کے مطابق  افغانستان جنگ کے ابتدائی دور میں پاکستان میں سی آئی اے کے اہلکاروں نے بن لادن کا محاصرہ کررکھا تھا اور اس کو گرفتار کرنے والے تھے کہ اس دور کے امریکی وزیر دفاع رامز فیلڈ نے اسامہ بن لادن کا محاصرہ فوری طور پر ختم کرنے کا حکم صادر کیا تھا۔

News Code 1283168

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 7 + 7 =