جاپان میں شدید زلزلہ اور سونامی سے کم از کم دو سو افراد ہلاک

جاپان کے شمال مشرق میں آنے والے جاپانی تاریخ کے شدید ترین زلزلے کے بعد سونامی کی لہروں نے تباہی پھیلائی ہے اور اب تک زلزلے اور سونامی سے صرف سیندائی شہر میں دو سو سے تین سو افراد کی ہلاکت کی تصدیق ہوئی ہے جبکہ بہت سے افراد لاپتہ ہیں۔

مہر خبررساں ایجنسی نے رائٹرز کے حوالے سے نقل کیا ہے کہجاپان کے شمال مشرق میں آنے والے جاپانی تاریخ کے شدید ترین زلزلے کے بعد سونامی کی لہروں نے تباہی پھیلائی ہے اور اب تک زلزلے اور سونامی سے صرف سیندائی شہر میں دو سو سے تین سو افراد کی ہلاکت کی تصدیق ہوئی ہے جبکہ بہت سے افراد لاپتہ ہیں۔

 جاپان میں اس شدید زلزلے کے بعد آسٹریلیا اور جنوبی امریکہ سمیت بحرالکاہل کے قریباً تمام ساحلی علاقے میں سونامی وارننگ جاری کر دی گئی ہے۔

جاپان میں جمعہ کی دوپہر آنے والے شدید زلزلے اور اس کے نتیجےمیں پیدا ہونے والی سونامی کی قریباً دس میٹر اونچی لہروں نے ملک کے شمال مشرقی ساحلی علاقوں میں تباہی پھیلائی ہے.

جاپان کے معیاری وقت کے مطابق دوپہر پونے تین بجے کے قریب آنے والے اس زلزلے کی ریکٹر سکیل پر شدت آٹھ اعشاریہ نو تھی اور اس کا مرکز ٹوکیو سے چار سو کلومیٹر دور سمندر میں بیس میل گہرائی میں تھا۔

ماہرین کے مطابق یہ جاپان کی تاریخ کا شدید ترین زلزلہ تھا اور اس زلزلے کے بعد آفٹر شاکس کا سلسلہ جاری ہے۔ زلزلے کے نتیجے میں آنے والے سونامی سے جاپان کا شمال مشرقی شہر سیندائی بری طرح متاثر ہوا ہے اور شہر اور اس کے اردگرد کی زرعی زمین زیرِ آب آ گئی ہے جبکہ شہر کے اردگرد کے کچھ علاقوں میں آگ بھی لگ ہوئی ہے جن میں کیسینوما نامی سات لاکھ آبادی کا شہر بھی شامل ہے۔

عینی شاہدین کے مطابق زلزلے سے ٹوکیو میں کئی منٹ تک عمارتیں لرزتی رہیں جس کے بعد لوگ خوف کے عالم میں گھروں سے باہر نکل آئے۔ زلزلے کے بعد ٹوکیو کے مضافات میں واقع تیل صاف کرنے والے کارخانے میں آگ لگ گئی۔ماہرین کا کہنا ہے وسیع پیمانے پر ہونے والی تباہی کی وجہ سے اس کا مکمل اندازہ لگانا ابھی مشکل ہے۔

News Code 1272093

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 4 + 0 =