امریکی صدرکا اپنے سابق وکیل کو طویل عرصے تک قید میں رکھنے کا مطالبہ

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے کانگریس کے سامنے جھوٹ بولنے پر اپنے سابق وکیل مائیکل کوہین کو طویل عرصے تک قید میں رکھنے کا مطالبہ کیا ہے۔

مہر خبررساں ایجنسی نے ایسوسی ایٹڈ پریس کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے کانگریس کے سامنے جھوٹ بولنے پر اپنے سابق وکیل مائیکل کوہین کو طویل عرصے تک قید میں رکھنے کا مطالبہ کیا ہے۔اطلاعات کے مطابق ڈونلڈ ٹرمپ کے سابق وکیل مائیکل کوہین کی جانب سے 2016 کی انتخابی مہم کے دوران ٹرمپ کے کہنے پر روس کے ساتھ ریئل اسٹیٹ معاہدے سے متعلق کانگریس کے سامنے جھوٹ بولنے کا اعتراف کیا تھا، جس کے بعد امریکی صدر کی جانب سے یہ مطالبہ سامنے آیا۔انہوں نے اپنے الزام کو دہراتے ہوئے کہا کہ خصوصی وکیل رابرٹ میولر گواہوں کو مجبور کر رہے ہیں کہ وہ صدر کو نقصان پہنچانے کے لیے جھوٹ بولیں۔ واضح رہے کہ رابرٹ میولر روس اور ٹرمپ کی مہم کے درمیان ممکنہ ملی بھگت کی تحقیقات کر رہے ہیں۔امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر ٹوئٹ کرتے ہوئے لکھا کہ ’آپ کا مطلب ہے کہ وہ فراڈ، بینک قرضے، ٹیکسز اور تمام وہ چیزیں کریں جو خوفناک ہوں اور ٹرمپ کے لیے غیر متعلقہ ہو اور وہ طویل مدت کے لیے جیل نہ جائے؟

سابق وکیل کے بارے میں انہوں نے لکھا کہ انہوں نے اپنے اس مقصد کےلیے جھوٹ بولا اور میرے خیال میں انہیں مکمل سزا ملنی چاہیے۔

واضح  رہے کہ مائیکل کوہین امریکی صدر کے قریبی ساتھی اور ٹرمپ انتظامیہ کے اعلیٰ عہدیداروں میں سے ایک تھے، تاہم گزشتہ ہفتے انہوں نے ماسکو میں ٹرمپ ٹاور پر ماسکو کی طاقتور شخصیات کے ساتھ رابطے کے بارے میں اپنی گواہی میں جھوٹ بولنے کا اعتراف کیا تھا۔

مائیکل کوہین نے اعتراف کیا تھا کہ ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے صدر کے لیے ریپبلکن کی نامزدگی حاصل کرنے کے بعد وہ 2016 کی پہلی ششماہی کے درمیان ان رابطوں میں رہے، جس میں روسی صدر ولادی میر پیوٹن بھی شامل تھے۔

News Code 1886168

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 3 + 10 =