جرمن نرس نے 100 سے زائد مریضوں کو قتل کرنے کا اعتراف کرلیا

جرمنی میں ایک مرد نرس نے ملک کے 2 مختلف ہسپتالوں میں 100 سے زائد مریضوں کو قتل کرنے کا اعتراف کرلیا۔

مہر خبررساں ایجنسی نے انڈیپنڈنٹ کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ جرمنی میں ایک مرد نرس نے ملک کے 2 مختلف ہسپتالوں میں 100 سے زائد مریضوں کو قتل کرنے کا اعتراف کرلیا۔ اطلاعات کے مطابق 41 سالہ نیلس ہویگیل پر الزام ہے کہ وہ ساتھیوں کو متاثر کرنے کے لیے مریضوں کو جان بوجھ کر ضرورت سے زیادہ ادویات کا استعمال کراتے تھے تاکہ مریض کی صحت بحال کی جاسکے۔ملزم نے ٹرائل کے پہلے دن عدالت میں اعتراف کیا کہ ان پر لگائے جانے والے الزامات درست ہیں۔ ملزم پر 1999 سے 2002 کے دوران جرمنی کے شمال مغربی شہر اولدنبورگ کے ایک ہسپتال میں متعدد مریضوں جبکہ 2003 سے 2005 کے دوران ایک اور ہسپتال میں متعدد مریضوں کے قتل کا الزام ہے۔واضح رہے کہ 2015 میں 2 مریضوں کے اقدام قتل کے جرم میں انہیں عمر قید کی سزا سنائی گئی تھی۔ٹرائل کے دوران ملزم کا کہنا تھا کہ انہوں نے جان بوجھ کر مریضوں کو ہارٹ اٹیک کی حالت تک پہنچایا کیونکہ وہ ان کی بحالی کی حالت کا لطف اٹھانا چاہتے تھے۔

اس اعتراف جرم کے بعد حکام سیکڑوں ایسی ہلاکتوں کی تحقیقات کررہے ہیں جن کی لاشوں کو بغیر کسی پوسٹ مارٹم کے دفنا دیا گیا تھا۔

ملزم کے خلاف اولدنبورگ میں 36 مریضوں کی ہلاکت جبکہ دیلمین ہورسٹ کے ہسپتال میں 64 مریضوں کے قتل میں نامزد کیا گیا، ان کا شکار مریضوں کی عمریں 34 سال اور 96 سال کے درمیان تھیں۔

News Code 1885218

لیبلز

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
  • 2 + 14 =